نمک کھانے کے نقصانات

نمک

ایک تحقیق کے مطابق کھانے میں زیادہ نمک کے استعمال سے درمیانی عمر کے افراد میں فالج اور دل کی بیماریوں کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

محققین کے مطابق دور نوجوانی میں کھانے میں بہت زیادہ نمک کا استعمال خون کی شریانوں کو نقصان پہنچاتا ہے کیونکہ اس عمر میں جسم میں خون کی رفتار بہت تیز ہوتی ہے۔

شریانوں کے لیے خطرناک

تحقیق میں یہ بات بھی سامنے آئی کہ غذا میں بہت زیادہ نمک کے استعمال سے شریانوں میں نمایاں  تبدیلی  ہوتی  ہے اور وہ سکڑ کر سخت ہوجاتی ہیں، بعد ازاں انسانی جسم میں خون کی روانی بری طرح متاثر ہوتی ہے۔ نمک کی یہ زائد مقدار خون میں شامل ہو کر آہستہ آہستہ شریانوں کو بند کرنا شروع کر دیتی ہے

نمک

گردے متاثر ہوتے ہیں

نمک کی مقدار خون میں بڑھنا شروع ہو جائے تو گردوں کا کام متاثر ہونے لگتا ہے۔ خون کی گردش کے مسائل بڑھ جاتے ہیں۔  اس طرح بلند فشار خون یا ہائی بلڈ پریشر کا مرض لاحق ہو جاتا ہے۔

نمک

  کیلشیم کا اخراج

آپ جس قدر نمک کھائیں گے، آپ کا جسم اسی قدر پیشاب کے ذریعے سے کیلشیم خارج کرے گا۔ اگر جسم میں کیلشیم کی کمی ہو گی تو اس کا براہ راست اثر ہڈیوں پر پڑے گا۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ نمک کی جسم میں زائد مقدار ہڈیوں کو کمزور یا بھربھرا کر دیتی ہے، جسے بوسیدگی عظام یا اوسٹیو پوروسس کا مرض کہا جاتا ہے۔

loading...

نمک

مدافعتی نظام کے لیے نقصان دہ

نمک کا زیادہ کھانا مدافعتی نظام کے لیے بھی نقصان دہ ہے۔ اس کے منفی اثرات انسان کے دماغ اور ریڑھ کی ہڈی پر مرتب ہو سکتے ہیں اور اعصابی کم زوری کا باعث بھی بن سکتے ہیں۔ تحقیق کے مطابق غذا میں نمک  کا زیادہ استعمال ان خلیوں میں اضافہ کر سکتا ہے، جن کی وجہ سے جسم اپنی ہی قوت مدافعت کے خلاف کام کرنا شروع کر دیتا ہے۔

نمک

کھانوں میں کم یا زیادہ نمک ڈالنا عموماً گھریلو خواتین کے ہاتھ  میں ہوتا  ہے۔ آپ ایسے کھانے تیار کریں جن میں نمک کم ہو۔ بچوں کو بازار کی تیار شدہ غذائیں کھانے سے روکیں۔ سادہ غذا اور پھل زیادہ سے زیادہ کھائیں۔ یاد رکھیں جو غذا کھائیں، اعتدال کے ساتھ کھائیں۔

نمک

Spread the love
  • 1
    Share

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں