امریکی صدرڈونلڈ ٹرمپ کے صحافیوں کے خلاف بیان پر اقوام متحدہ کی تنقید

نیویارک :اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے عہدیداروں نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے میڈیا مخالف بیان کی سختی سے مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے صحافیوں کے خلاف پر تشدد کارروائیوں میں اضافے کا خدشہ ہے۔

اقوام متحدہ کے خبر رساں ادارے کے مطابق امریکی صدر کی جانب سے میڈیا پر کیا جانے والا حملہ خاص حکمت عملی کے تحت رپورٹنگ پر اعتماد کم کرنے اور تصدیق شدہ حقائق کے بارے میں شکوک و شبہات پھیلانے کیلئے کیا گیا۔اس ضمن میں اقوامِ متحدہ کے خصوصی رپورٹر برائے آزادی اظہار رائے ، ڈیوڈ کائے اور انٹر امریکن کمیشن برائے انسانی حقوق کے عہدیدار ایڈیسن لینزا کی جانب سے مشترکہ بیان جاری کیا گیا۔

رپورٹ کے مطابق امریکی صدر اس سے قبل بھی متعدد مرتبہ میڈیا کے اداروں اور صحافیوں پر تنقید کرچکے ہیں اور انہوں ایک مرتبہ پھر متنازع بیان دینے کے لیے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر کا استعمال کیا۔اپنے پیغام میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے صحافیوں کو ’لوگوں کا دشمن‘ کا قرار دیاتاہم امریکی صدر کی صاحبزادی ایوانکا ٹرمپ نے اپنے والد کے دیے گئے بیان سے لاتعلقی کا اظہار کیا۔

واضح رہے کہ ماضی میں صحافتی اداروں کی جانب سے ڈونلڈ ٹرمپ کی پالیسیوں اور بیانات پر تنقید کرتے ہوئے انہیں صدارت کے منصب کے لیے غیر موزوں قرار دیا گیا تھا جس پر ڈونلڈ ٹرمپ نے موقف اختیار کیا کہ میڈیا کا رویہ ان کے ساتھ جانبدارانہ ہے۔دوسری جانب وائٹ ہاؤس ترجمان سارا سینڈرز نے صحافیوں کو دی جانے والی بریفنگ کے دوران ڈونلڈ ٹرمپ کے بیان کے رد میں یہ کہنے سے انکار کردیا کہ میڈیا دشمن نہیں ہے جس پر امریکی خبر رساں ادارے سی این این کے صحافیوں نے بریفنگ سے واک آؤٹ کیا۔

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں