آسیہ بی بی کی رہائی کے خلاف احتجاج کا خاتمہ حکومت کی طرف سے عارضی حل قرار

فواد چوہدری
loading...

وفاقی حکومت نے آسیہ بی بی کی رہائی کے خلاف مذہبی جماعتوں کی جانب سے دیئے گئے دھرنے کے خاتمے کے لیے ہونے والے معاہدے کو عارضی حل قرار دیے دیا ہے۔

وفاقی وزیر برائے اطلاعات و نشریات فواد چودھری نےاپنے  انٹرویو میں  کہا کہ ہمارے پاس دھرنا ختم کرانے کے لیے دو آپشن تھے، فورس استعمال کرتے تو لوگ قتل ہو سکتے تھے، ریاست کو ایسا نہیں کرنا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے مذاکرات کی کوشش کی اور مذاکرات میں آپ کچھ حاصل کرتے ہیں اور کچھ چھوڑنا پڑتا ہے۔

فواد چوہدری نے حکومت کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے جو کچھ کیا وہ صرف فائر فائٹنگ ہے، فی الوقت حکومت نے جو قدم اٹھایا ہے وہ اس مسئلے کا علاج نہیں ہے۔


انہوں نے کہا کہ انتہا پسندی اور پُرتشدد احتجاجی مظاہروں کا مستقل حل ڈھونڈنا ہو گا۔

وفاقی وزیر نے واضح کیا کہ آسیہ بی بی کو ملک چھوڑنے کی اجازت دینے یا نہ دینے سے متعلق فیصلہ عدالت کرے گی۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت آسیہ بی بی کی سیکیورٹی کے لیے تمام ضروری اقدامات اٹھائے گی۔

خیال رہے کہ تین روز قبل سپریم کورٹ نے مسیحی خاتون آسیہ بی بی کو توہین رسالت کیس میں شواہد نہ ہونے کی بنیاد پر رہا کر دیا تھا جس کے خلاف مذہبی جماعتوں نے ملک بھر میں مظاہرے شروع کر دیے تھے۔

گزشتہ روز بھی نماز جمعہ کے بعد ملک کے مختلف شہروں میں بڑے پیمانے پر احتجاجی مظاہرے کیے گئے جس کے خاتمے کے لیے حکومت اور تحریک لبیک پاکستان کی قیادت کے درمیان ایک 5 نکاتی معاہدہ بھی طے ہوا تھا۔

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں