loading...

رومانیہ سے تعلق رکھنے والی فوٹوگرافر ماہیلا نوروک  Mihaela Noroc  نے اپنی نوکری چھوڑ کر دنیا گھومنے نکل پڑیں۔

ماہیلا نوروک    Mihaela Noroc  اب تک انٹارکٹیکا کے سوا تمام براعظموں میں گھوم چکی ہیں۔ وہ دنیا کے 60 ممالک میں سینکڑوں خوبصورت خواتین کی تصاویر لے چکی ہیں۔ اپنے اس پراجیکٹ کو انہوں نے اٹلس آف بیوٹی کا نام دیا ہے۔
ماہیلا نوروک کے بقول

“میرے خیال میں ہماری دنیا کو خوبصورتی کے نقشے کی ضرورت ہے تاکہ جان سکیں کہ دنیا کتنی پرتنوع ہے”

“More than ever, I think our world needs an Atlas of Beauty to show that diversity is something beautiful, not a reason for conflict,” Noroc explains to Tech Insider. “I hope that the portraits from The Atlas of Beauty can challenge many misconceptions that exist around the world.”

ان کی تصاویر کی ایک پوسٹ ہم پہلے ہی شائع کرچکے ہیں۔

خوبصورتی کی کھوج اور نوکری… پڑھیئے رومانیہ کی فوٹوگرافر کی حیرت انگیز کہانی

وہ خود بتاتی ہیں ۔ میرے والد مصور تھے تو بچپن سے ہی میرے ارگرد رنگ ہی رنگ نظر آتے تھے، جب میں 16 سال کی ہوئی تو فوٹوگرافی سے دلچسپی بڑھی۔

مگر بدقسمتی سے آئندہ کئی برس تک مجھے دیگر شعبوں میں کام کرنا پڑا تاکہ مناسب آمدنی کماسکوں، ان دنوں تعطیلات کے دوران مختلف جگہوں پر جانے کے بعد مجھے اپنے سیارے کے تنوع کو دریافت کرنے کا موقع ملا اور یہی وجہ ہے کہ 27 سال کی عمر میں رومانیہ میں اپنی عام زندگی کو چھوڑ کر اپنی تمام جمع پونجی سفر اور فوٹوگرافی پر لگادی، اس طرح اٹلس آف بیوٹی کا قیام عمل میں آیا’۔

مزید پڑھیں۔  تاجکستان: خواتین کو کیا پہننا چاہیے اور کیا نہیں, سرکاری فیشن کی کتاب جاری

ان کے بقول ‘ میرے خیال میں ہماری دنیا کو خوبصورتی کے نقشے کی ضرورت ہے تاکہ جان سکیں کہ دنیا کتنی پر تنوع ہے’۔

ان کا کہنا تھا ‘مجھے توقع ہے کہ اس پراجیکٹ میں شامل تصاویر دنیا بھر میں موجود متعدد غلط تصورات کو چیلنج کرسکیں گی’۔

یہ فوٹوگرافر پانچ زبانوں میں مہارت رکھتی ہیں جو انہوں نے تصاویر لینے میں مدد دیتا ہے۔ ابھی بھی ان کا سفر جاری ہے اور 2017 میں ان کی ان تصاویر پر مبنی کتاب بھی شائع ہوچکی ہے۔

جاپان  (japan)

یہ تصویر جاپانی شہر کیوٹو میں لی گئی ہے اور یہ خاتون یوکا گیشا (جاپانی رقاصہ) کے طور پر کام کرتی ہیں، جو کہ بچپن میں کافی سخت ماحول میں رہتی تھیں مگر انہیں آزادی کی خواہش تھی۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

ایران (ٰIran)

ایرانی دارالحکومت تہران سے تعلق رکھنے والی یہ خاتون ستارہ شاعری سے دلچسپی رکھتی ہیں اور فوٹوگرافر نے یہ تصویر ان کے گھر میں لی۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

تہران (ٰTehran)

فوٹوگرافر کے مطابق میڈیا میں ایران کے بارے میں بہت کچھ منفی لکھا جاتا ہے مگر سب سے اہم بات یہ ہے کہ کوئی بھی ملک اس کے شہریوں سے جانا جاتا ہے۔ تصویر میں دکھائی جانے والی خاتون بچپن سے وائلن بجانا سیکھ رہی ہیں اور اپنے پہلے کنسرٹ کی تیاری کررہی ہیں۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

مادووا (ٰMoldova)

مشرقی یورپی ملک مادووا کے شہر کیشیناو کی گلیوں میں اس تصویر کو لیا گیا۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

تاجکستان (ٰTajikistan)

تاجکستان میں یہ تصویر 2015 میں لی گئی تھی اور ایک موقع پر تو فوٹوگرافر کو لگا کہ فرزانہ نامی یہ خاتون کسی ہولی وڈ اداکارہ ہیں۔

مزید پڑھیں۔  ڈینگی سے لڑنے کے آسان اور سستے طریقے
ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

 ازمیر (Azmeer)

ترک شہر ازمیر میں فوٹوگرافر کی اس خاتون سے ملاقات ہوئی جو کہ اسکول ٹیچر بننے کی خواہش مند ہیں۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

عراق  (Iraq)

اس خاتون کے والدین کرد تھے اور صدام حسین کے دوران میں انگلینڈ چلے گئے تھے، تاہم ماسٹر ڈگری حاصل کرکے وہ ایک بار پھر عراق آگئی ہیں اور اب وہاں بائیولوجی کی تعلیم دے رہی ہیں۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

امریکہ  (America)

لیڈیا نامی یہ خاتون میوزیشین ہے اور ان کا تعلق نیویارک سے ہے۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

رومانیہ  (Romania)

یہ تصویر فوٹوگرافر نے اپنے آبائی شہر بخارسٹ میں کھینچی۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

میانمار (Myanmar)

میانمار کے شہر ینگون میں یہ تصویر فوٹوگرافر نے دنیا کے لیے اپنے پہلے سفر میں لی۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

 استنبول (Istanbul)

ترک شہر استنبول میں سہ پہر کے وقت لی گئی ایک  تصویر۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

کیوبا (Cuba)

کیوبا کے دارالحکومت ہوانا بھی اس فوٹوگرافر کی منزل رہا اور وہاں بھی انہوں نے کیمرے کی آنکھ میں کئی تصاویر کو محفوظ کیا۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

برازیل (ؓBrazil)

اس خاتون نے اپنی عمر 47 سال بتاتے ہوئے دعویٰ کیا کہ جب وہ کسی کو اپنی عمر بتاتی ہیں تو بیشتر افراد کو یقین ہی نہیں آتا۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc

جرمنی (Germany)

جرمن شہر میونخ میں ایک تہوار کے موقع پر اس تصویر کو لیا گیا، یہاں 1810 سے لوگ اس تہوار میں مخصوص ملبوسات پہن کر شرکت کرتے ہیں۔

ماہیلا نوروک
Courtesy of Mihaela Noroc
Spread the love

Comments

comments