تھائی لینڈ میں نوجوان بھوتوں سے بچنے کے لیے ناخنوں کو پینٹ کرنے لگے

تھائی لینڈ

تھائی لینڈ کے کالاسن صوبہ کے ایک گاؤں پو ہونگ میں نوجوانوں نے بھوتوں سے بچنے کے لیے اپنے ناخنوں کو رنگنا شروع کر دیا ہے۔

گاؤں میں ہونے والی حالیہ بہت سی ہلاکتوں کا ذمہ دار انہی بھوتوں کو قرار دیا جا رہا ہے۔ گاؤں میں پچھلے تین ہفتوں میں پانچ ہلاکتوں کے بعد ناخن پینٹ کرنے کا رواج کافی بڑھ گیا ہے۔ مرنے والے پانچ افراد میں سے دو کا تعلق ایک ہی خاندان سے تھا۔

پانچ میں سے دو افراد تو اچانک گرے اور وفات پا گئے۔ ایک لڑکی کی وفات موٹرسائیکل کے حادثے میں ہوئی جبکہ دوافراد کے فوت کی وجوہات میڈیا کو نہیں بتائی گئی۔ گاؤں میں ہونے والی ان ہلاکتوں کو گاؤں والوں نے اتفاق سمجھنے کی بجائے مافوق الفطرت قوتوں کی کارستانی سمجھا اور اس کے لیے حفاظتی اقدامات کرنے شروع کر دئیے۔

ان حفاظتی اقدامات میں سے سب سے اہم ناخنوں پر پینٹ کرنا ہے۔

اس گاؤں میں رہنے والی 60 سالہ روحانی عامل بوسادی سالاسی نے بتایا کہ انہیں ان ہلاکتوں میں دو بھوتوں کے ملوث ہونے کا یقین ہے۔ ان میں سے ایک بھوت تو بیوہ ہے، جو مردوں کا نشانہ بناتی ہے جبکہ دوسرا بھوت لوگوں پر قبضہ کر کے انہیں اندر ہی اندر کھاتا رہتا ہے۔

گاؤں  والوں کے پاس جسم پر قبضہ کرنے والے بھوت سے بچنے کا تو کوئی طریقہ نہیں لیکن بیوہ بھوت سے بچنے کے لیے ناخنوں پر پینٹ کرنا شروع کر دیا۔ نوجوانوں نے بیوہ بھوت کو دھوکا دینے کے لیے اپنے گھروں کے باہر یہاں کوئی مرد نہیں رہتا لکھوانا بھی شروع کر دیا ہے۔

گاؤں کے ایک بوڑھے رہائشی کا کہنا ہے کہ گاؤں کے کچھ لوگ گاؤں کے مندر میں رہ رہے ہیں اور کچھ اپنے گھروں سے ہی نہیں نکلتے۔

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں