کیا خواتین نیل پالش لگا کر نماز پڑھ سکتی ہیں ؟

نیل پالش

بھارت کی سب سے بڑی دینی درسگاہ دارالعلوم دیوبند نے نیل پالش کے حوالے سے فتویٰ جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ نیل پالش کے ساتھ نماز نہیں ہوتی۔

فتویٰ میں کہا گیا ہے کہ نیل پالش کا استعمال غیر اسلامی عمل ہے۔ اس کے بجائے خواتین اپنے ناخنوں کے لیے مہندی کا استعمال کریں۔

دارالعلوم دیوبند کے مفتی اسرا ر نے بھارتی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے فتویٰ جاری ہونے کی تصدیق کی اور کہا کہ اسلام خواتین کو زینت اختیار کرنے سے نہیں روکتا۔

اگر کوئی خاتون نیل پالش لگا کر نماز پڑھتی ہیں تو اس کی نماز نہیں ہوتی ۔ اس کے لیے ضروری ہے کہ اپنے ناخنوں سے نیل پالش پوری طرح نکال دیں ۔

مفتی اسرار نے مزید کہا کہ نیل پالش سے وضو مکمل نہیں ہوتا کیونکہ نیل پالش پانی کو ناخنوں تک پہنچنے نہیں دیتا ۔ اس لیے ضروری ہے کہ نیل پالش کو پوری طرح صاف کریں ۔ اسی طرح خواتین اور مردوں کے لیے ناخن بڑھانا بھی غیراسلامی فعل ہے۔

Spread the love
  • 2
    Shares

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں