غداری کا مقدمہ: نواز شریف اور شاہد خاقان عباسی کے خلاف سماعت 22 اکتوبر تک ملتوی

نوازشریف

لاہور: لاہور ہائی کورٹ نے سابق وزیراعظم  نوازشریف اور شاہد خاقان عباسی کے خلاف غداری کے مقدمے کے اندراج کی درخواست پر سماعت 22 اکتوبر تک ملتوی کردی۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس مظاہرعلی اکبرنقوی کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے نوازشریف اور شاہد خاقان عباسی کے خلاف دائرغداری کے مقدمے کے لیے درخواست پرسماعت کی۔

عدالت میں سماعت شروع ہونے کے باوجود نوازشریف روسٹرم تک نہ پہنچ سکے۔ سابق وزیراعظم کے وکیل اے کے ڈوگر نے عدالت میں کہا کہ ہم ہر وقت عدالت میں حاضر ہوتے ہیں۔

بعد ازاں لاہور ہائی کورٹ نے سابق وزیراعظم  نواز شریف اور شاہد خاقان عباسی کے خلاف غداری کے مقدمے کے اندراج کی درخواست پرسماعت 22 اکتوبر تک ملتوی کردی۔

اس سے قبل آج صبح سابق وزیراعظم نوازشریف اور شاہد خاقان عباسی لاہور ہائی کورٹ پہنچے۔ اس موقع پر لاہور ہائی کورٹ کے اطراف سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے اور پولیس کی اضافی نفری کو تعینات کیا گیا۔

loading...

مسلم لیگ ن کے رہنما جاوید ہاشمی بھی لاہور ہائی کورٹ پہنچے جبکہ کارکنوں کی بڑی تعداد عدالت کے باہر موجود تھی۔ مسلم لیگ ن کے قائد اور شاہد خاقان عباسی کے خلاف دائر درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ نواز شریف  نے ملکی سلامتی کے خلاف سرل المیڈا کو انٹرویو دیا، نوازشریف کے بیان سے دنیا میں پاکستان کی بدنامی ہوئی۔

لاہور ہائی کورٹ میں دائر درخواست کے مطابق شاہد خاقان نے متنازع انٹرویومیں نوازشریف کی معاونت کی، نوازشریف، شاہدخاقان عباسی، سرل المیڈا کے خلاف غداری مقدمہ درج کیا جائے۔

خیال رہے کہ گزشتہ سماعت پرلاہور ہائی کورٹ نے شاہد خاقان عباسی اور نوازشریف کوذاتی حیثیت میں طلب کرتے ہوئے سرل المیڈا کا نام ای سی ایل میں ڈالنے اور ناقابل ضمانت وارنٹ جاری کرنے کا حکم دیا تھا۔

Spread the love
  • 2
    Shares

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں