دنیا کی 10 فیصد آبادی ڈپریشن اور ذہنی دباؤ کا شکار ہے، رپورٹ

ذہنی دباؤ
loading...

عالمی ادارہ برائے صحت کا کہنا ہے کہ ڈپریشن، افسردگی اور دیگر ذہنی دباؤ کے باعث ملازمت پیشہ افراد کام  پر توجہ دینے سے قاصر ہوتے ہیں

  یہ ہی وجہ ہے کہ اس سے ان کے کام کرنے کی صلاحیت متاثر ہوتی ہے۔ اقوامِ متحدہ کے ادارہ برائے صحت کی ایک رپورٹ میں اس بات کا انکشاف کیا گیا ہے کہ دنیا کی 10 فیصد آبادی کسی نہ کسی ذہنی دباو یا دماغی مسئلے سے دو چار ہے۔

رپورٹ کے مطابق ان ہی ذہنی دباو، پریشانیاں اور ڈپریشن کی وجہ سے ملازمت پیشہ لوگوں کی کارکردگی منفی طور پر متاثر ہو رہی ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا  ہے کہ کم آمدنی، گھریلو مسائل کے علاوہ کام کے دوران حکام کی جانب سے منفی رویہ بھی ملازمت پیشہ افراد کے لیے ڈپریشن کا سبب بنتا ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ اس کے نتیجے میں عالمی معیشت کو سالانہ 900 ارب ڈالر کا نقصان ہو رہا  ہے۔ رپورٹ کے مطابق پرسکون  ماحول، روز مرہ کے معاملات میں تبدیلی اور دیگر ہلکی پھلکی سرگرمیوں میں شرکت سے آپ کسی حد تک اس مسئلے پر قابو پا سکتے ہیں۔

Spread the love
  • 3
    Shares

Comments

comments

مزید پڑھیں۔  بزرگ افراد کا عالمی دن: بڑھاپے میں صحت مند کیسے رہ سکتے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں