وزیراعظم عمران خان کا ہنی مون

سرچ کی جانے والی شخصیت

(روہیل اکبر)

پی ٹی آئی حکومت کا ہنی مون ٹائم بہت تیزی سے گذر رہا ہے اور اس کے لیے کپتان نے خود ہی تین ماہ کا وقت لیا تھا جس کے بعد ہی اندازہ ہوگا کہ عمران احمد خان نیازی کھلاڑی زیادہ اچھے ہیں یا سیاستدان؟

کھلاڑی تو سب مانتے ہیں اور اس کا بڑا ثبوت 1992ء کا کرکٹ ورلڈ کپ ہے۔ ان کے بارے میں ایک بات بڑی واضح ہے کہ اپنی دھن کے پکے ہیں۔ جو ہدف اپنے لیے چن لیتے ہیں اسے پورا کیے بغیر آرام سے نہیں بیٹھتے۔ 1992ء میں ٹارگٹ اگر ورلڈ کپ جیتنا تھا تو اس کے لیے کسے ٹیم میں رکھنا ہے کسے نہیں اس کا فیصلہ کر کے اس پر ڈٹ جاتے تھے۔ ساری دنیا اور سینئرز چاہیں مزاحمت کرتے رہیں جیسے کہ میانداد کے بارے میں ایک مرتبہ تنازع کھڑا ہوا تھا لیکن وہ اپنی ہی منواتے تھے۔ اسے دھن کے پکے کہیں یا ضدی پن، وہ جو ہدف بنا لیتے تھے اس سے ہٹتے نہیں تھے بلکل ایسے ہی جیسے خان صاحب عثمان بزدار کی وزارت اعلیٰ کے حوالے سے ڈٹ گئے حالانکہ اس حوالے سے انہیں بہت سی باتیں سننے کو ملی کہ جمعہ جمعہ آٹھ دن ہوئے پارٹی میں شامل ہوئے اور وزیراعلیٰ بنا دیے گئے جبکہ پارٹی کے لیے اپنا خون حتیٰ کہ جانیں تک دینے والے خان کی نظروں میں کیوں نہ سما سکے۔

پارٹی ٹکٹ بھی جاگیرداروں اور سرمایہ داروں کو دے دیے گئے کیونکہ وہ ریس جیتنے والے گھوڑے ہر میدان میں کامیاب رہتے ہیں خواہ ادھر ہو یا ادھرمگر حکومت بنانا کپتان کی ضد تھی اس لیے یہ سب کچھ بھی کرنا پڑا۔ اب سب سے بڑا سوال یہ ہے کہ سیاست میں بطور وزیراعظم ان کا یہ خاصہ ان کے لیے مفید ثابت ہو گا یا نہیں۔ 22 سال قبل ابتدائی نہ نہ کے بعد اچانک سیاست کے میدان میں اترنے کے بعد حکومت بنانا یا وزیراعظم بننا ان کا ہدف بن گیا تھا اور بالآخر یہ ہدف انھوں نے حاصل کر لیا ہے۔ ایک اچھے کھلاڑی کے لیے سب سے بڑی بات جیت ہوتی ہے۔ جیت اس کے لیے کسی بھی کھیل کی انتہاء ہوتی ہے اس کا آغاز نہیں۔

مرکز میں حکومت کے بڑے ہدف کے راہ میں انھیں چھوٹی چھوٹی کامیابیاں صوبہ خیبر پختونخواء میں 2013ء کے انتخابات میں اقتدار کا ملنا بھی تھا۔ اگرچہ تحریک انصاف تو اس صوبے میں زبردست ترقی کے گن گاتی ہے اور 25 جولائی کی بڑی کامیابی کو اسی کا مرہون منت قرار دیتی ہے لیکن عمران کے ناقدین کے مطابق انھوں نے پشاور میں نیٹ پریکٹس کا موقع گنوایا۔ پشاور کو بنی گالہ سے چلایا اور وہاں جا کر معاملات کو اپنے ہاتھوں میں لینے میں بظاہر کوئی دلچسپی ظاہر نہیں کی۔

عمران کی سابق زوجہ ریحام خان نے اپنی کتاب میں بھی لکھا کہ انھوں نے عمران خان سے پشاور رہ کر صوبے کی ترقی میں بھرپور کردار ادا کرنے کی تجویز کئی مرتبہ دی لیکن خان صاحب نے ایک نہ سنی اور اس کی بظاہر ایک ہی وجہ بنتی تھی کہ پھر وہ مرکز میں توجہ نہ دے سکتے۔ یعنی بڑا ہدف ان کے نزدیک ہمیشہ سے مرکز رہا ہے۔ عمران خان نے اگر کچھ سیکھا تو وہ یہ تھا کہ احتساب کے لیے نئے ادارے نہیں چل پائیں گے۔ کرپشن کا اس صوبے میں خاتمہ تو نہیں ہوا ہاں تحریک انصاف کو سمجھ آ گئی کہ پرانے ناکارہ پرزوں کو ہی دوبارہ کارآمد بنانا بہتر ہے۔

پاکستان کے 22 واں وزیراعظم بننے والے 65 سالہ عمران خان کون سے عمران ہوں گے، کھلاڑی یا سیاستدان؟

امید ہی کی جا سکتی ہے کہ وہ کھلاڑی نہیں ہوں گے جو صرف جیت کے لیے کھیلتا ہے۔ کیا وہ جیت کے بعد بھی حکومتی سرگرمیوں کو سنجیدگی سے لیں گے یا نہیں۔ ایک کھلاڑی نہیں بلکہ وزیراعظم کی طرح اجلاس در اجلاس شرکت کرنی ہوگی، ملکی اور غیرملکی وفود سے ملاقاتیں کرنا ہوں گی، ماضی کے برعکس جیب میں شناختی کارڈ پڑی واسکٹ میں قومی اسمبلی کے اجلاسوں میں باقاعدگی سے جانا بھی ہو گا اور معلوم نہیں کیا کچھ کرنا ہو گا۔

اب تک تو انھیں دن میں ایک پارٹی میٹنگ ہی کرتے دیکھا ہے۔ گذشتہ دنوں ایک برطانوی اخبار سے انٹرویو میں ان کا کہنا تھا کہ وہ سوشل لائف کے لیے اب بہت بوڑھے ہو چکے ہیں۔ ان کے حامی ایک سینئر صحافی نے یہ کہہ کر خطرے کی گھنٹی بجا دی کہ انھیں خیرخواہ جتنی زیادہ احتیاط کی تلقین کرتے ہیں، اتنی ہی بے احتیاطی موصوف کرتے ہیں۔

عمران خان کی ایک اور عادت جو انھیں مشکل میں ڈال سکتی ہے وہ ان کی کسی سے ڈکٹیشن نہ لینے کی ہے۔ سنتے تو وہ شاید سب کی ہیں لیکن ہمیشہ کرتے اپنی ہی ہیں۔ اس صورت حال میں وہ دیگر ریاستی اداروں کے لیے کتنے قابل قبول ہوں گے یہ واضح نہیں۔ عمران خان کے ساتھ جڑا ایک سوال یہ بھی ہے کہ انھیں آخر سیاست کے دشت میں منزل تک پہنچنے میں اتنا وقت کیوں لگا۔ پاکستان میں تو کئی بڑے سیاستدان یا تو موروثی سیاست یا پھر اسٹیبلشمنٹ کے راستے اقتدار کے ایوانوں کی سیر کرنا شروع کر دیتے ہیں تو پھر انھیں یہاں پہنچنے میں اتنی دیر کیوں لگی؟ کچھ مبصرین کے خیال میں اپنی سیاست کی ابتدائی نرسری میں وہ شاید کتابی نظریات کے قیدی رہے۔ آئیڈیلزم کے گرویدہ رہے۔ اپنے نظریات پر کسی قسم کی سودے بازی کی کوشش سے باز رہے لیکن 2013ء کے عام انتخابات میں جیت کو اتنا قریب سے دیکھنے کے بعد شاید انھوں نے اس سے دوبارہ دور نہ جانے کا تہیہ کر لیا تھا۔

پھر کیا تھا نظریات اور اپنے ہی بنائے ہوئے اصولوں میں دھیرے دھیرے نرمی دکھانا شروع کی اور آخر میں الیکٹیبلز کو بھی اپنی صف میں لا کھڑا کیا۔ یہی سمجھوتے شاید انھیں وزیراعظم ہاؤس کی دہلیز پر لے آئے ہیں۔ وہ مزید کتنا بدلتے ہیں یا نہیں اس کے لیے ہمیں زیادہ انتظار شاید نہ کرنا پڑے۔ ان کے ہنی مون پیریڈ میں ہی اس کے اشارے مل جائیں گے۔ جیتنا شاید آسان تھا لیکن عوام کی توقعات کا پہاڑ سر کرنا اب اس کھلاڑی کا اگلا ہدف ہونا چاہیئے اور اس کے لیے کپتان کو خود ہی کپتانی کے فرائض انجام دیتے ہوئے غریب عوام کے لیے ہنگامی بنیادوں پر خوشحالی کے پیکج کا اعلان کرنا ہوگا نہ کہ بجلی، گیس اور پٹرول کی قیمتوں میں اضافہ کرکے سابقہ حکومتوں کی پالیسیوں کو آگے بڑھا کر عوام کو خودکشیوں پر مجبور کیا جائے۔

Spread the love
  • 10
    Shares

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں