پاکستان کا قرضہ 6 ہزار ارب سے 30 ہزار ارب تک پہنچ گیا ہے، وزیراعظم

وزیراعظم

اسلام آباد : وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ پاکستان کاقرضہ 6 ہزار ارب سے 30 ہزار ارب تک پہنچ گیا، قوم کا اربوں روپیہ لوٹ کر کھا لیا گیا، پیسے ہوں گے تو ترقیاتی کام ہوگا اور ملک بھی ترقی کرے گا۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد میں وزیراعظم عمران خان نے وفاقی کابینہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا گزشتہ 10 سال میں پاکستان کا قرضہ 6 ہزار ارب سے 30  ہزار ارب تک  پہنچ گیا، قوم کا اربوں  روپیہ لوٹ کرکھا لیا گیا،

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ وزارت خزانہ سے دس سال کے قرضوں سے متعلق تفصیلات پوچھی ہیں، ماضی کے قرضوں کی اقساط کے لیے مزید قرضے لینے پڑ رہے ہیں ، پیسے ہوں گے تو ترقیاتی کام بھی ہوں‌ گے اور ملک بھی ترقی کرے گا۔

عمران خان نے کہا کہ ملک کیلئے لیا گیابیرونی قرضہ کیسےخرچ کیا گیا ؟ عوام کو بھی بتائیں گےکہ ان کے لیے لیا گیا قرضہ کہاں خرچ کیا گیا؟

ہاؤسنگ اسکیم کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم ایک اہم منصوبہ ہے، ہاؤسنگ اسکیم سے بے گھر لوگوں کو اپنے گھر ملیں گے اور روزگار کے مواقع میسر آئیں گے۔

وزیراعظم نے کہا ہم ملک کی ترقی کیلئے سب کو ساتھ لے کر چلیں گے، ون ونڈو آپریشن کے ذریعے منصوبے کا آغازکر رہے ہیں، منصوبے کی تکمیل سے ہماری معیشت میں نمایاں بہتری آئے گی۔

یاد رہے گز شتہ روز نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے زیراعظم کا کہنا تھا کہ پاکستان کا قرضہ 6 ہزار ارب سے 30 ہزار ارب تک 10سالوں میں قرضہ بڑھ گیا، 10سے 20 ارب ڈالر کا شارٹ فال ہے،گزشتہ حکومت18ارب ڈالر کا خسارہ ورثے میں چھوڑ کر گئی۔

عمران خان نے کہا تھا منی لانڈرنگ کو پہلے روکا ہوتا توآج قرضہ نہ لینا پڑتا میں آپ کو مشکل وقت سے نکالوں گا، کچھ عرصہ مشکل دورسے گزرنا پڑے گا، پاکستان کواس مشکل سے نکال لیں گے، روڈ میپ میں بتائیں گے مشکل سے نکلنے کے لیے کیا اقدامات  کر رہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ڈاکا پڑے تو گھرمشکل وقت سے گذرتا ہے،اڑتالیس گھنٹے سے شور مچا ہوا ہے کہ جیسے قیامت آگئی، قرضہ واپس کرنے کے لیے قرض چاہیے، ہم آج اصلاحات کر رہے ہیں، اس کے ثمرات  کچھ ماہ بعد نظر آئیں گے۔

Spread the love
  • 2
    Shares

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں