دورد شریف کے فضائل ، برکات ،ثمرات

دورد شریف کے فضائل ، برکات ،ثمرات
اللہ رب العزت نے اپنے محبوب سرور کونین تاجدرار کائنات فخر موجودات ،سرکاردوعالم ،احمد مجتبیٰ کو دنیا والوں کی رہنمائی کو دنیا والوں کی رہنمائی کے لئے معبوث فرمایا ۔ حضور اکرم   ﷺ   سے محبت و عقید ت مسلمانوں کے ایمان کا جزوخاص ہے اور تکمیل ایمان کا خاصہ اور تقاضا ہے لہذا جو مسلمان اپنے آقا  ﷺ  سے نسبت خصوصی کا خواہاں ہے اس کے لئے لازم ہے کہ کثرت سے درود شریف پڑھنے کو شعار بنالیں تاکہ عشق رسول  ﷺ  کی وشمع دل کی کال کوٹھری میں بھی روشن ہوجائے اورزنگ آلوددہ دل آقا کی محبت کے طفیل چمک دارا ہوجائے ۔ اس کا سب سے آسان نسخہ کثر ت سے درود پاک کا ورد کرنا ہے۔
اللہ عزوجل قرآن مجید فرقان حمید میں ارشاد فرماتے ہیں۔ بے شک اللہ تعالیٰ اور اس کے فرشتے رحمت بھیجتے ہیں پیغمبر نبی پاک ﷺ پر، اے ایمان والو! تم بھی آپؑ پردورد بھیجا کرو اور خوب سلام بھیجا کرو۔ امام زین العابدین ؒ سے منقول ہے: حضوراکرم ﷺ پر کثرت سے درود بھیجنا اہل سنت کی علامت ہے۔
مترک آیت قرآنی کی روشنی میں جس عمل کو کائنات خالق ،ارض وسماء کامالک اللہ جل جلالہاور اس کے ملائکہ کر رہے ہوں تو ہمارا ایک ایسے عظیم الشان ، بے مثل عمل میں شریک ہوجانا خیر اور بھلائی ہے۔
یعنی دورد شریف کا پڑھنا ہم مسلمانوں کے لئے دنیا وآخرت میں اللہ جل شانہ کی طرف سے انعام اور توفیق ہے ۔ حضور اکرم  ﷺ  کافرمان عالیشان ہے۔ بلاشک قیامت میں لوگوں میں سب سے زیادہ مجھ پر دورد بھیجنے گا۔
دورد شریف کے فضائل ، برکات ،ثمرات
ایک اور حدیث کا مفہوم ہے
مجھ پر درود بھیجنا قیامت کے دن پل صراط کے اندھیرے میں نور ہے جویہ چاہے کہ اس کے اعمال بہت بڑے ترازومیں تلیں اسے چاہئے کہ مجھ پر کثر ت سے درود بھیجا کرے
حضرت سخاویؒ  ایک حدیث مبارکہ کا مفہوم نقل فرماتے ہیں : تین اشخاص قیامت کے دن اللہ تبارک وتعالیٰ کے عرش کے سائے میں ہوں گے ، جس دن اس کے سایہ رحمت کے سوا کسی اور چیز کا سایہ نہ ہوگا۔ ایک وہ شخص جوکسی مصیبت زدہ کی مصبت ہٹائے ،دوسراشخص جومیر ی سنت کو زندہ کرے۔ تیسرا وہ شخص جو مجھ پر کثرت سے دورد بھیجے ۔
طبراتی سے حدیث مبارکہ کا مفہوم ہے۔ حضرت سیدنا حضوراکرم ﷺ  کا فرمان پاک ہے: جوشخص صبح وشام دس دس مرتبہ مجھ پر درود بھیجے گا اس کو قیامت کے روز میری شفاعت پہنچ کر رہے گی ۔
 کنزالعمال حدیث نمبر  2218 کا مفہوم  ہے:جب کوئی بندہ حضوراکرم  ﷺ پر درود بھیجتاہے تو وہ درود پاک حضوراکرم  ﷺ تک فرشتے لے کر پہنچاتے ہیں ۔ ہمارے لئے اس سے بڑی سعادت اور کیا ہوگی کہ سرور کونین ،تاجدار حرم شاہ عرب محمدؑ کی بزم میں ہمارا نام پہنچ جائے اور ہم بھی سرکار دوعالم کی شفاعت اور سفارش کے مستحق بن جائیں ۔
اللہ تعالیٰ کا ہم پر انعام وکرام ہے کہ درودشریف کی برکت سے دنیا وآخرت دونوں میں ہمارے لئے خیر اور بھلائی رکھی ہے ۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اپنے فضل وکرم سے درود شریف کے انوار تجلیات سے فیض اٹھانے والا بنادے ۔(آمین) درود شریف کے ثمرات پر حافظ ابن قیمؒ حدیث مبارکہ کا مفہوم بیان کرتے ہیں۔           ۔(1)   قیامت کے دن درود شریف کی برکت سے اہوال وآفات سے نجات نصیب ہوگی
۔(2)   درود شریف پڑھنے والے حضور اکرم  ﷺ کے سلام سے مشرف ہوں گے
۔(3)   درود شریف کی برکت سے بھولی ہوئی باتیں یا آجاتی ہیں
۔(4)   درود شریف کی برکت سے مسلمان ظلم سے محفوظ رہتاہے
۔(5)   درودشریف پڑھنے والا پل صراط سے بآسانی سے گزرجائے گا
۔(6)   دوردشریف پڑھنے والے اللہ تعالیٰ کی رحمت خاص حاصل ہوتی ہے
۔(7)   درود شریف پڑھنا باطنی اور صفائی قلب کا ذریعہ ہے۔
دورد شریف کے فضائل ، برکات ،ثمرات
ان کے فوائد وثمرات کس قدرعظمت وبلندی درود شریف کی معلوم ہوتی ہے ۔ اللہ تعالیٰ ہمیں بہ کثر ت درودشریف پڑھنے کی توفیق دائمی توجہ قلبی کے ساتھ نصیب فرمائے ۔درود شریف کا پڑھنا ایسی افضل عبادت ہے کہ،،ذکر،، لء اندر موجود ہے۔ حضوراکرم ﷺ کے احسانات کا اعتراف اس میں موجود ہے۔
الغرض بے شمار فضائل وبرکات وفیض وانوار اس میں موجود ہیں۔حاجت روائی ،پریشانی میں راحت ار ہرشرعی ضرورت کا پورا ہونا درود بھیجنے کا صلہ بندے پر دس مرتبہ سلامتی قرار دیاجاتاہے۔سبحان اللہ ہم مسلمانوں کی کس قدر خوش بخشی ہے کہ ایک بار درود وسلام پڑھنے پررحمن ورحیم رب کی رحمت کے شفیق نبی پاک  ﷺ  شفاعت کاوعدہ فرماتے ہیں اور دوسری اور بدنصیبی ہے اس مسلمان کیلئے جس کے سامنے اس عظیم المرتبت جلیل القدر محسن انسانیت جناب محمدمصطفیؑ کا نام مبارک آئے اوراُن پر درود پاک نہ پڑھے ۔حضرت علیؓسے روایت کرتے ہیں کہ امام الانبیاء سیدنا محمد مصطفی ﷺ  نے ارشاد فرمایا ،بخیل ہے وہ شخص جس کے سامنے میرا نام لیا اور ذکر کرلیا جائے اور وہ مجھ پر دورد نہ بھیجے یااللہ !ہمیں اس بخل سے بچا لے ۔(آمین)

Comments

comments

مزید پڑھیں۔  گزرے کل کو بھول کر آنے والے کل پر نظر !

دورد شریف کے فضائل ، برکات ،ثمرات” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں