نارمل ڈلیوری کی بجائے آپریشن (C-Section) کا رجحان پریشان کن حد تک بڑھ گیا.

C-Section

حالیہ طبی ریسرچ کے مطابق چند ممالک جن میں (پاکستان بھی شامل ہے ) میں بچوں کی پیدائش کے لیے غیر ضروری آپریشن (C-Section) کی تعداد میں گزشتہ 15 برسوں کے دوران ‘خطرناک’ حد تک اضافہ ہوا ہے۔

برطانوی نشریاتی ادارے ‘بی بی سی کی رپورٹ‘ کے مطابق میڈیکل جریدے دی لینسیٹ کے مطابق سال 2000 میں تقریباً 1 کروڑ 60 لاکھ سیزیرین آپریشن (C-Section) ہوئے اور 2015 میں ان آپریشنز کی تعداد بڑھ کر 2 کروڑ 97 لاکھ تک پہنچ گئی۔

رپورٹ کے مطابق لاطینی امریکا کے ملک ڈومینکا میں 58 فیصد بچوں کی پیدائش آپریشن کے ذریعے ہوئی۔

تحقیق میں بتایا گیا کہ ڈاکٹروں نے تصدیق کی کہ ہزاروں بچوں کی پیدائش میں آپریشن کی ضرورت نہیں تھی۔

Doctors’ use of Caesarean section (C-Section) to deliver babies has nearly doubled in 15 years to reach “alarming” proportions in some countries, a study says.Rates surged from about 16 million births (12%) in 2000 to an estimated 29.7 million (21%) in 2015, the report in the medical journal The Lancet said.The nation with the highest rate for using the surgery to assist childbirth is the Dominican Republic with 58.1%.Doctors say in many cases the use of the medical procedure is unjustified.Until recently, the World Health Organization (WHO) suggested that Caesarean section – or C-section – rates of more than 15% were excessive.

اس سے قبل ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) نے بتایا تھا کہ آپریشن کے ذریعے بچوں کی پیدائش میں 15 فیصد اضافہ ہوا۔

loading...

اگر ڈبلیو ایچ او کے بتائے گئے 15 فیصد کو حالیہ تحقیق کے تناظر میں دیکھا جائے تو تقریبا 44 لاکھ 55 ہزار بچوں کی پیدائش میں آپریشن کی ضرورت ہی نہیں تھی۔

محققین نے بتایا کہ ڈومنیکا، برازیل، مصر اور ترکی میں تقریباً 50 فیصد بچوں کی پیدائش میں آپریشن ہوئے تاہم برازیل نے 2015 میں پالیسی کا اطلاق کرتے ہوئے ڈاکٹروں سے آپریشن کی تعداد میں کمی کا کہا۔

تحقیق میں امیر اور غریب ممالک کے تناظر میں بھی انکشاف کیا گیا کہ بعض حالات میں خاص طور پر افریقہ میں بچوں کی پیدائش کے وقت ضرورت کے باوجود آپریشن نہیں کیا جاتا۔

پروفیسر سینڈال نے کہا کہ سیزیرین سیکشن (آپریشن C-Section) سے خاتون میں طبی مسائل جنم لیتے ہیں اور ہر مرتبہ آپریشن کی صورت میں طبی نوعیت کے سنگین مسائل پیدا ہوتے رہتے ہیں۔

ڈاکٹر نے بتایا کہ نجی ہسپتالوں یا کلینکس میں بچے کی پیدائش کی تاریخ طے ہونے کی وجہ سے ڈاکٹر اور ہسپتال کو بہتر مالی فائدہ پہنچتا ہے۔

Spread the love
  • 23
    Shares

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں