امریکہ اور برطانیہ کا انوسٹمنٹ کانفرنس کے بائیکاٹ کا فیصلہ

امریکہ اور برطانیہ
loading...

واشنگٹن: امریکہ اور برطانیہ نے سعودی صحافی کے مبینہ قتل میں ریاض کے ملوث ہونے کے شبے پر سعودیہ میں منعقد ہونے والی انوسٹمنٹ کانفرنس میں شرکت نہ کرنے کا سوچ رہے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق ترکی کے دارالحکومت استنبول میں واقع سعودی سفارت خانے میں صحافی جمال خشوگی کی گمشدگی پر برطانیہ اور امریکا نے سعودی عرب میں منعقد ہونے والی عالمی کانفرنس کے بائیکاٹ کا سوچ رہے ہیں۔

برطانوی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ استبول حکام کا خیال ہے کہ سعودی جاسوسوں نے صحافی کو سفارت خانے کے اندر قتل کردیا ہے، جبکہ ریاض حکومت نے دعویٰ کیا ہے کہ جمال خشوگی کے قتل سے متعلق افواہیں ’جھوٹ‘ پر مبنی ہیں۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ اگر یہ ثابت ہوگیا کہ لاپتا سعودی صحافی جمال خشوگی استنبول میں سعودی قونصل خانے میں ہلاک کیے گیے ہیں تو ریاض حکومت کو سخت سزا دی جائے گی۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ انوسٹمنٹ کانفرنس کے متعدد اسپانسرز اور میڈیا گروپس نے کانفرنس میں شرکت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے، یہ فیصلہ جات جمال خشوگی کی گمشدگی واقعے کا نتیجہ ہے۔

برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق سفارت ذرائع کا کہنا تھا کہ محمد بن سلمان کی جانب سے ریفورم ایجنڈے کو پروموٹ کرنے کے لیے منعقدہ کانفرنس میں امریکی وزیر خزانہ اسٹیو میونچن اور برطانیہ کے عالمی ٹریڈ سیکریٹری لائم فوکس نے شرکت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

خیال رہے کہ گذشہ روز امریکی صدر کے مطابق خشوگی کا کیس اس لیے بھی اہم ہے کہ کیونکہ وہ ایک رپورٹر ہیں تاہم اس معاملے کی وجہ سے سعودی عرب کو اسلحے کی فروخت کے معاہدوں پر کوئی اثر نہیں پڑے گا، ہم لوگوں کی ملازمتوں کو نقصان نہیں پہنچانا چاہتے ہیں۔

دوسری طرف ترک ذرائع کا کہنا ہے کہ ابتدائی تحقیقات سے واضح ہوتا ہے کہ جمال خشوگی کو استنبول میں واقع سعودی قونصلیٹ میں ہی ہلاک کردیا گیا تھا، خشوگی کا معاملہ ترکی اور سعودی عرب کے باہمی تعلقات میں بھی کشیدگی کا باعث بن سکتا ہے۔

سعودی وزیر داخلہ عبدالعزیز بن سعود نے ریاست پر صحافی کے اغوا اور قتل کے الزامات بے بنیاد قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ جلد حقائق منظر عام پر آجائیں گے، جمال خشوگی کے لاپتا اور قتل کی افواہیں سعودی عرب کے خلاف سازش ہے۔

برطانوی میڈیا کا کہنا ہے کہ سعودی حکومت اور ولی عہد محمد بن سلمان کی پالیسیوں کو شدید تنقید کا نشانہ بنانے والے صحافی جمال خشوگی 2 اکتوبر کو استنبول میں سعودی سفارت خانے سے لاپتہ ہوئے تھے۔

واضح رہے کہ ولی عہد محمد بن سلمان کی پالیسیوں پر تنقید کرنے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع ہونے کے بعد جمال خشوگی خود ساختہ جلا وطنی ہوکر امریکہ منتقل ہوگئے تھے جہاں وہ مشہور اخبار واشنگٹن پوسٹ میں صحافتی ذمہ داریاں انجام دے رہے تھے۔

Spread the love
  • 5
    Shares

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں