قانونی شکار ہی جنگلی حیات کے تحفظ کی ضمانت ہے، ڈی جی وائلڈ لائف

لاہور : ڈائریکٹر جنرل وائلڈ لائف اینڈ پارکس پنجاب خالد عیاض خان نے کہا ہے کہ تین روزہ فیزنٹ شوٹ پروگرام 2018ء میں پنجاب اور دیگر صوبوں سے آئے ہوئے 45 شکاری حضرات شکار سے لطف اندوز ہوئے اور محکمہ کو 7 لاکھ 20 ہزار روپے آمدن ہوئی ۔ انہوں نے کہا کہ پروگرام کے انعقاد سے نہ صرف عوام اور شکاری حضرات میں محکمہ کا سوفٹ امیج کھل کر سامنے آیا ہے بلکہ سپورٹس ہنٹنگ کے عمل کو بھی فروغ ملا ہے،توقع سے کہ اس پروگرام کے انعقاد سے جنگلوں میں موجود جنگلی جانوروں و پرندوں پر سے دباؤ میں بھی خاطر خواہ کمی واقع ہو گی ۔ انہوں نے یہ بات یہاں اپنے د فتر میں ملاقات کے لئے آنے والے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے فیزنٹ شوٹ پروگرام 2018 ء کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے بتائی۔ انہوں نے کہا کہ شکاریوں کے پر زور اصرار پر محکمہ جنگلی حیات و پارکس کے زیر اہتمام فیزنٹ شوٹ پروگرام 2018 ء کو صوْبہ بھر کے عوام بالخصوص شکاری حضرات میں پذیرائی ملی ہے اور عوام کو صحت مند تفریح میسر آ ئی ہے اور شکاریوں کی خصوصی دلچسپی کے باعث محکمہ وائلڈ لائف ان کی تفریح کا یہ سلسلہ جاری رکھے گا۔ انہوں نے کہا کہ قانونی شکار ہی جنگلی حیات کے تحفظ کی ضمانت ہے۔ خالد عیاض خان نے کہا کہ اس سے قبل بھی محکمہ ہنٹرز کنونشن، کمیونٹی بیسڈ آرگنائزیشنز سیمینار ، بریڈرز کنونشن، کالا ہرن و چنکارہ سفاری ٹرافی ہنٹنگ، فیزنٹ شوٹ پروگرام 2016 ء اور اس جیسی دیگر تقریبات کے ذریعے جنگلی حیات کے تحفظ کے لئے عوام آگہی پیدا کر چکا ہے اور شکاریوں کو قانونی شکار کے فروغ کے لئے ہر ممکن مواقع فراہم کر رہا ہے۔انہوں نے کہا کالا ہرن اور چنکارہ سفاری ٹرافی ہنٹنگ پروگرام 2016 ء اور فیزنٹ شوٹنگ پروگرام 2016 ء اور اب موجودہ فیزنٹ شوٹ پروگرام کے انعقاد کا بنیادی مقصد محکمہ جنگلی حیات اور قانونی شکاریوں کے مابین فاصلوں کو کم کر کے باہمی تعلقات کو مزید بہتر بنانا ہے۔ انہوں نے کہا کہ قانونی شکار کو فروغ دے کر ہی غیر قانونی شکار کی حوصلہ شکنی ممکن ہے۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ جنگلی حیات کے زیر اہتمام بریڈ کروا ئے گئے پرندوں کا شکار کروانے سے جنگلوں میں موجود پرندوں کی آبا دی کو بھی پورا رکھنا ممکن ہوگا۔

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں