متاثرہ بچی کے اہلخانہ کو انصاف فراہم کرنیکا مطالبہ کرنے والوں کے خلاف طاقت کے وحشیانہ استعمال کے انتہائی سنگین نتائج نکل سکتے ہیں

مقبوضہ کشمیر

مقبوضہ کشمیر میں بھارتی ریاستی دہشت گردی نے خوفناک رخ اختیار کر لیا ہے‘ مشترکہ حریت قیادت
سید علی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق اور یٰسین ملک کاجبر واستبداد کی تمام کارروائیوں کی اقوام متحدہ کے جنگی جرائم کے ٹریبونل سے تحقیقات کا مطالبہ

سرینگر:مقبوضہ کشمیر میں سید علی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق اور محمد یٰسین ملک پر مشتمل مشترکہ حریت قیادت نے بھارتی فورسز کی طرف سے مقبوضہ علاقے میں بڑھتے ہوئے قتل عام، خواتین کی آبروریزی، غیر قانونی طور پر نظر بند کشمیریوں پر تشدد اور پر امن مظاہرین کے خلاف طاقت کے وحشیانہ استعمال پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے جبر واستبداد کی تمام کارروائیوں کی اقوام متحدہ کے جنگی جرائم کے ٹریبونل سے تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔ متاثرہ بچی کے اہلخانہ کو انصاف فراہم کرنیکا مطالبہ کرنے والوں کے خلاف طاقت کے وحشیانہ استعمال کے انتہائی سنگین نتائج نکل سکتے ہیں۔

کشمیر میڈیاسرو س کی معلومات کے مطابق مشترکہ حریت قیادت نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہا کہ جیل خانہ جات کے ڈائریکٹر جنرل نے مقبوضہ علاقے کے انسانی حقوق کمیشن کے سامنے نظر بندوں کے حوالے سے غلط بیانی سے کام لیا جو انتہائی افسوسناک ہے۔ غیر قانونی طور پر نظر بند کشمیریوں کی حالت زارکے حوالے سے جو اطلاعات مل رہی ہیں حریت قیادت انہیں ثابت کرنے کے لیے اقوامِ متحدہ کی نگرانی میں کسی بھی تحقیقاتی کمیشن کا سامنا کرنے کے لیے بھی تیارہے۔ مشترکہ قیادت نے مقبوضہ علاقے اوربھارتی جیلوں میں نظر بند کشمیریوں پر تشدد ڈھانے، ان سے بیگار لینے، انہیں ذلت آمیز سلوک کا نشانہ بنانے، نظر بند طلباء کو نصابی کتابیں فراہم نہ کرنے اور انہیں ہر قسم کی بنیادی سہولیات سے محروم رکھنے کی ظالمانہ کارروائیوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ مقبوضہ علاقے کے اطراف و اکناف میں بھارتی ریاستی دہشت گردی نے ایک خوفناک رُخ اختیار کر لیاہے جسے روکنے کے لیے عالمی برادری کی مداخلت ناگزیر بن چکی ہے۔ مزاحمتی قیادت نے کٹھوعہ میں آٹھ سالہ کم سن بچی کی آبرو ریزی قتل کے بہیمانہ واقعے میں ملوث بھارتی پولیس اہلکاروں کو سرکاری تحفظ فراہم کرنا لاقانونیت اور سرکاری دہشت گردی کا بین ثبوت ہے۔

مزید پڑھیں۔  بھارتی مجسمہ ساز نیریت سے فٹبال کپ کا مجسمہ بنا ڈالا

مزاحمتی قیادت نے کہا کہ اس قسم کے گھناؤنے واقعات میں ملوث مجرموں کو کیفر کردار تک پہنچانے کے لیے اقوامِ متحدہ کی نگرانی میں تحقیقاتی کمیشن کا قیام ناگزیر ہے۔ اس المناک واقعے کے خلاف کشمیریوں خاص طور پر طلباء کا ردعمل ایک فطری عمل ہے لیکن بھارتی فورسز کی طرف سے پر امن مظاہرین کو طاقت کے وحشیانہ استعمال کامسلسل نشانہ بنایا جا رہا ہے ۔جو انسانی حقوق کی بدترین پامالی ہے۔ مشترکہ قیادت نے کہا کہ متاثرہ بچی کے اہلخانہ کو انصاف فراہم کرنیکا مطالبہ کرنے والوں کے خلاف طاقت کے وحشیانہ استعمال کے انتہائی سنگین نتائج نکل سکتے ہیں، جس کی تمام تر ذمہ داری بھارت اور مقبوضہ علاقے میں اسکی کٹھ پتلیوں پر عائد ہو گی۔انہوں نے کشمیریوں سے اپیل کی کہ وہ اپنی صفوں میں نظم و ضبط اور اتحاد و اتفاق کو مزید مضبوط بناتے ہوئے ان عناصر سے ہوشیار رہیں جو اتحاد کو کمزور کرنے کی ناپاک کوششوں میں لگے ہوئے ہیں

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں