نواز شریف کو سزا ہوئی مگر سیاسی انتخابی نظام جوں کا توں ہے،ڈاکٹر طاہرالقادری

ڈاکٹر طاہرالقادری
loading...

لاہور :پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر محمد طاہرالقادری نے کہا ہے کہ نواز شریف کو سزا ہوئی مگر سیاسی انتخابی نظام جوں کا توں ہے، نظام نہ بدلہ تو کچھ نہیں بدلے گا،

آج نواز شریف ہے تو کل کوئی اور ہو گا، اِکا دُکا نااہل ہوئے اور جیل گئے، اسمبلیاں نااہلوں سے ہی بھریں گی، نواز شریف کو 1990 ء کے مالی جرائم پر 2018 ء میں سزا ہوئی، اس نظام نے نہ صرف مجرم کو 28 سال تحفظ دیا بلکہ تین بار وزیراعظم کے منصب پر بھی بٹھایا جو 28سال دندناتا رہا اب پکڑے جانے پر چیخیں تو مارے گا، طاقتور اور کرپٹ سمجھتے ہیں کہ وہ ان ٹچ ایبل ہیں، انہیں کوئی ہاتھ نہیں لگا سکتا، یہ ملک و قوم کی بدقسمتی ہے کہ نواز شریف اور ان جیسے جرائم پیشہ عناصر جیلوں کی بجائے حکومتیں بناتے اور گراتے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے بریشیا( اٹلی)میں عہدیداروں، کارکنوں کے ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا کہ پاکستان کے پڑھے لکھے باشعور حلقے دیکھ رہے ہیں کہ اس نظام میں الیکشن لڑنے کیلئے 10سے 80 کروڑ روپے چاہئیں، اگر تمام خوبیاں ہیں اور حرام کا پیسہ نہیں ہے تو کوئی شریف آدمی عزت سے ہار بھی نہیں سکتا، ہماری جنگ اس نظام کے ساتھ ہے، میرا ریفارمز ویژن یہ ہے کہ پڑھا لکھا سفید پوش الیکشن لڑ سکے اور اپنا آئینی، قومی ،جمہوری کردار ادا کر سکے، انہوں نے کہا کہ میں پاکستان میں 4کی جگہ 30صوبے دیکھنا چاہتا ہوں بلکہ ہر ڈویژن کی سطح پر ایک صوبہ ہونا چاہیے، اقتدار،وسائل اور طاقت برابر تقسیم ہونی چاہیے،

مزید پڑھیں۔  نیب کی کارروائی ،ایم این ایم موٹر سائیکل کرپشن کیس میں مرکزی ملزم کا قریبی ساتھی گرفتار

پنجاب کا ایک نہیں 8 منتخب وزرائے اعلیٰ ہونے چاہئیں، وفاق اور صوبوں کی بجائے ضلع اور تحصیل کی حکومتیں مضبوط ہونی چاہئیں، اس نام نہاد جمہوری نظام کی رگ رگ میں آمریت ہے،یہ سراسر ظلم ہے کہ تین صوبوں کے مقابلے میں ایک صوبہ پنجاب ملکی اقتدار کے فیصلے کرتا ہے، کوئی جماعت تین صوبوں میں ہار جائے اور صرف ایک صوبہ پنجاب میں جیت جائے تو وہ پورے پاکستان کی حکمران بن جاتی ہے،قومی یکجہتی،مساوات،برداشت اور رواداری کہاں سے آئے گی؟۔ وفاق صوبوں کا ان داتا ہے اور صوبے ضلع، تحصیل اور یونین کونسلوں کے ناخدا بنے ہوئے ہیں،

کسی گلی میں گٹر کاڈھکن لگانا ہو تو فنڈز کی منظوری صوبائی ’’دارالخلافوں ‘‘سے ہوتی ہے، ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا کہ الیکشن میں نہ جانے کے فیصلے کا تعلق اصول اور نظریے سے ہے، الیکشن نہ لڑنے کا فیصلہ کیا مگر بائیکاٹ نہیں کیونکہ ہم جمہوریت پر یقین رکھتے ہیں ، احتساب، اصلاحات اور پھر انتخاب ہونگے تو مثبت نتائج نکلیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ تمام پی پی تنظیمات کو پانچ اصولوں پر مبنی کوڈ آف کنڈکٹ ارسال کیا گیا ہے اس کو فالو کرتے ہوئے ہر تنظیم اپنے حلقے میں پسند کے امیدوار کو ووٹ دے سکتی ہے۔ مرکز کو صوبائی حلقوں پر مشتمل تنظیموں کے فیصلوں میں دخل اندازی سے سختی سے روک دیا ہے۔

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں