تاجکستان: خواتین کو کیا پہننا چاہیے اور کیا نہیں, سرکاری فیشن کی کتاب جاری

لباس

ماڈلز کوسات سے 70 برس کی خواتین کے لیے مناسب لباس پہنے دکھایا گیا ہے،کتاب میں تجاویز

تاجکستان کی حکومت نے ایک کتاب شائع کی ہے جس میں خواتین کو یہ بتایا گیا ہے کہ انھیں کیا پہننا چاہیے اور کیا نہیں۔ برطانوی ٹی وی کے مطابق تجاویز کی کتاب وزارت ثقافت کی جانب سے شائع کی گئی ہے اور اس میں ماڈلز کوسات سے 70 برس کی خواتین کے لیے مناسب لباس پہنے دکھایا گیا ہے۔اس کتاب میں مختلف باب ہیں جن میں خواتین کو کام پر جاتے وقت، قومی اور سرکاری چھٹیوں کے موقع پر، شادیوں اور ہفتہ وار چھٹیوں تک کے موقع پر پہننے کے لیے کپڑوں کے بارے میں بتایا گیا ہے۔

اس کے بعد اس کتاب کے آخر میں ایک باب ہے جس میں تاجک خواتین کو بتایا گیا ہے کہ انھیں کون سے کپڑے نہیں پہننے چاہیے۔ اس میں خواتین کو سیاہ لباس اور حجاب وغیرہ پہننے سے منع کیا گیا ہے۔تاجکستان میں اسلامی ملبوسات کے خلاف مہم چلائی جا رہی ہے جسے صدر ایموملی رحمان کی تنقید کے باوجود کافی سراہا جا رہا ہے۔

اس کے علاوہ کہا گیا ہے کہ بعض مغربی لباس ہفتہ وار چھٹیوں کے موقعے پر پہنے جا سکتے ہیں۔عوامی مقامات پر فلپ فلاپ یا سلپرز، یا سکن ٹائٹ پاجامے یا سینتھیٹک کپڑے جو مضر صحت ہوں کے پہننے سے منع کیا گیا ہے۔تاجکستان مسلم اکثریتی ملک ہے لیکن وہاں کی حکومت زیادہ سیکولر مگر روایتی ثقافت لانے کی کوشش کر ہی ہے۔

اس کتاب کے حوالے سے سوشل میڈیا پر ردعمل کچھ زیادہ مثبت نہیں آیا ۔ایک صارف نے اس کی تعریف کرتے ہوئے اسے خوبصورت کہا لیکن ساتھ ہی بعض نے قومی لباس کی اونچی قیمتوں پر افسوس بھی کیا۔

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں