نجی میڈیکل کالجز میں اضافی فیسوں کی وصولی کے خلاف ازخودنوٹس کی سماعت,اضافی فیسیں واپس کرنے کا حکم:سپریم کورٹ

سپریم کورٹ کانجی میڈیکل کالجز کو طلبہ سے وصول کی گئی اضافی فیسیں واپس کرنے کا حکم
8لاکھ 50ہزار سے زائد وصول کی گئی فیس واپس ہو گی ،فیصلے پرعملدرآمد نہ کرنیوالے نجی میڈیکل کالجز کے خلاف کارروائی کی جائے
ڈاکٹر عاصم کے دور میں قواعد کے برعکس رجسٹرڈ میڈیکل کالجز کیخلاف نوٹس ،معاملہ نیب کو بھجواتے ہوئے ایک ماہ میں رپورٹ طلب
ہم پیسوں کی وصولیاں کرارہے ہیں، آپ کو بھی چار سے ساڑھے چار ارب روپے دینے پڑسکتے ہیں‘چیف جسٹس کا ڈاکٹر حسین سے مکالمہ
لاہور: سپریم کورٹ نے ملک بھر کے نجی میڈیکل کالجز کو طلبہ سے وصول کی گئی اضافی فیسیں واپس کرنے کا حکم دیتے ہوئے کہا ہے کہ8لاکھ 50 ہزار سے زائد وصول کی گئی فیس طلبہ کو واپس ہو گی،فیصلے پرعملدرآمد نہ کرنے والے نجی میڈیکل کالجز کے خلاف کارروائی کی جائے ۔ سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں بینچ نے نجی میڈیکل کالجز میں اضافی فیسوں کی وصولی کے خلاف ازخودنوٹس کی سماعت کی۔آغاز پر پی ایم ڈی سی ،یوایچ ایس اور دیگر فریقین پر مشتمل کمیٹی نے سفارشات پیش کیں۔چیف جسٹس نے ریڈ کریسنٹ کالج کی ستائش کرتے ہوئے کہا کہ 8لاکھ 50ہزار سے زائد وصول کی گئی فیس واپس کرنے پر شاباش دیتا ہوں ۔سماعت کے دوران چیف جسٹس پاکستان نے ڈاکٹر عاصم کے دور میں قواعد کے برعکس رجسٹرڈ میڈیکل کالجز کے خلاف بھی نوٹس لیا اور نجی ٹی وی کے مطابق معاملہ نیب کو بھجواتے ہوئے ایک ماہ میں رپورٹ طلب کرلی۔دوران سماعت چیف جسٹس نے ڈاکٹر عاصم سے مکالمہ کیا کہ ہم پیسوں کی وصولیاں کرارہے ہیں، آپ کو بھی چار سے ساڑھے چار ارب روپے دینے پڑسکتے ہیں۔چیف جسٹس نے حکم دیا کہ پورے پاکستان میں تمام نجی میڈیکل کالجز طلبہ سے8 لاکھ 50ہزار سے زائد وصول کیے گئے پیسے واپس کریں اور اسکی رپورٹ پیش کی جائے اورفیصلے پرعملدرآمد نہ کرنے والے نجی میڈیکل کالجز کے خلاف کارروائی کی جائے۔سماعت کے دوران چیف جسٹس نے ایف آئی اے کو نجی میڈیکل کالجز کو ہراساں کرنے سے بھی روک دیا اور ریمارکس دئیے کہ کسی کو لوگوں کو ہراساں کرنے کی اجازت نہیں دو ں گا ۔چیف جسٹس نے میڈیکل کالجز کو میرٹ پر پانچ ،پانچ طلبہ کو داخلے دینے کی بھی ہدایت کی

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں