حوالات میں ہر ملزم کی عزت نفس کا خیال رکھا جاتا ہے، نیب

File photo

وفاقی احتساب بیورو (نیب) نے حوالات میں تشدد اور عقوبت خانوں کے الزامات مسترد کر دیئے۔

نیب کی جانب سے جاری اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ ہر ملزم کو ریمانڈ کے لیے احتساب عدالت میں پیش کیا جاتا ہے اور ہر ملزم کی عزت نفس کا خیال رکھا جاتا ہے۔

نیب نے اپنے اعلامیے میں حوالات میں تشدد اور عقوبت خانوں کے الزامات مسترد کرتے ہوئے کہا کہ نہ کسی نے تشدد کی شکایت کی اور نہ ہی کسی نے عقوبت خانہ قرار دیا۔

وفاقی احتساب بیورو کے مطابق ہر ملزم کے حوالے سے سائنسی بنیادوں پر تحقیقات کی جاتی ہیں، تشدد اور عقوبت خانے کی کہانیاں جارحانہ اور منظم پروپیگنڈے کا حصہ ہیں۔

loading...

اعلامیے میں مزید کہا گیا ہے کہ پروپیگنڈا اس لیےکیا جا رہا ہےکہ نیب کو قانون کے مطابق کارروائی سے روکا جائے۔

ترجمان نیب نے کہا کہ نیب کسی دباؤ کے بغیر کام کر رہا ہے اور عدم تشدد کی پالیسی پر یقین رکھتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وائٹ کالر جرائم میں تشدد کی ضرورت نہیں ہوتی۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف نے الزام عائد کیا تھا کہ نیب کی حوالات کسی عقوبت خانے سے کم نہیں ہیں۔

شہباز شریف کا کہنا تھا کہ مجھے جھوٹے کیسز میں ملوث کیا گیا، نیب حکام مجھے بلیک میل کرتے ہیں، مجھے بلڈ کینسر ہے اور چیک اپ بھی نہیں کروایا جا رہا۔

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں