سعودی عرب، اْوبر اور کریم کے لیے خواتین ڈرائیوروں کی مانگ بڑھ رہی ہے

اْوبر اور کریم

ہمارے نزدیک کاروبار کے حقیقی معنوں میں بے شمار نئے مواقع پیدا ہوں گے،کریم مینیجرکی گفتگو

سعودی عرب میں ڈرائیونگ کی اجازت ملنے کے بعد نجی ٹیکسی کمپنیوں اْوبر اور کریم میں خواتین ڈرائیوروں کی مانگ بڑھ گئی اوراب یہ دونوں کمپنیاں یہ امید لگائے بیٹھی ہیں کہ سعودی عرب میں جون میں خواتین کو جب کاریں چلانے کی اجازت ملے گی تو ان میں بہت سی ان کی سروس کی کاریں بھی چلا رہی ہوں گے اور کسی نامحرم کے ساتھ کار میں سفر سے گریزاں سعودی خواتین کی ایک بڑی اکثریت ان کے ساتھ سواری کو پسند کرے گی۔

loading...

امریکی اخبار سے بات چیت میں نجی کمپنی اْوبر کے ریجنل مینجر انتھونی خورے نے کہاکہ ہمارے نزدیک کاروبار کے حقیقی معنوں میں بے شمار نئے مواقع پیدا ہوں گے۔

سعودی عرب میں اب تک قریباً تین ہزار خواتین نے کریم کے ساتھ خود کو ڈرائیور کے طور پر رجسٹر کرایا ہے۔ کمپنی نے ان کے لیے خصوصی تربیتی نشستوں کا اہتمام کیا ہے جن میں انھیں آن لائن پلیٹ فارمز استعمال کرنے کے طریقے بتائے جارہے ہیں۔

کریم کے شریک بانی اور چیف پرائیویسی افسر عبداللہ الیاس کیتو نے کہاکہ خواتین کپتان بہت سی خواتین کو بہتر خدمات مہیا کرنے کے لیے ہماری مدد کریں گی لیکن وہ مردوں کو اپنے ساتھ سوار کرنے سے انکار کردیں گی۔

Spread the love

Comments

comments

مزید پڑھیں۔  نگران وزیراعظم کی تقرری میں تاخیر اور ڈیڈلاک برا شگون ہے ،لیاقت بلوچ

اپنا تبصرہ بھیجیں