آسٹریلوی ماہرین نے خون کا نیا سادہ ٹیسٹ متعارف کرا دیا

آسٹریلوی ماہرین
loading...

آسٹریلوی ماہرین نے خون کا ایسا نیا سادہ ٹیسٹ متعارف کروایا ہے جس کی مدد سے کینسر سے متاثرہ افراد کو آپریشن کے بعد غیر ضروری کیموتھراپی سے نجات مل سکے گی۔

چینی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق یہ ٹیسٹ آسٹریلیا کے شہر میلبورن کے والٹر اینڈ الیزا ہال انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل ریسرچ کے ماہرین نے تیار کیا ہے اور آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کے 40 اسپتالوں میں اس کو مریضوں پر آزمایا جارہا ہے۔

ٹیسٹ کے ذریعے متاثرہ فرد کے خون کا نمونہ لے کر اس بات کا تعین کیا جاسکتا ہے کہ اس کے جسم میں کینسر ٹیومر (سرطانی رسولی) کے آپریشن کے بعد اس کے کچھ حصے موجود ہیں یا اسے آپریشن کے دوران مکمل طور پر جسم سے نکال دیا گیا ہے۔

اس وقت تک ایسا کوئی طریقہ کار موجود نہیں تھا جس کی مدد سے اس بات کا درست تعین ہوسکے کہ سرطانی رسولی کا آپریشن کس حد تک کامیاب رہا ہے اور مریضوں کو احتیاطاً کیموتھراپی کے تکلیف دہ عمل سے گذرنا پڑتا تھا اور اس کے درد، تھکن، متلی، نظام ہضم کی خرابی، یادداشت متاثر ہونے، حمل سے متعلق اور دل، پھیپھڑوں اور اعصابی نظام پر سائیڈ ایفیکٹس برداشت کرنا پڑتے تھے۔

نئے ٹیسٹ کے ذریعے مریضوں کی بڑی تعداد کو ایسی تمام کیفیات سے نجات مل سکے گی۔ نئے ٹیسٹ کی آزمائش 2015 میں شروع کی گئی تھی جو 2021 ء میں مکمل ہوگی۔

Spread the love
  • 8
    Shares

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں