طلاق ثلاثہ کے معاملے پر اسلامی نظریاتی کونسل کا اجلاس

طلاق

اسلام آباد: معاشرے سے بیک وقت 3 طلاقیں دینے کے رجحان کو ختم کرنے کے لیے اسلامی نظریاتی کونسل کا اجلاس آج ہوگا۔

جس میں ایک ساتھ 3 طلاقیں دینا غیر قانونی، غیر موثر اور قابلِ سزا قرار دیے جانے کے امکانات ہیں۔ واضح رہے کہ کونسل میں یہ معاملہ رواں برس جنوری سے زیر غور ہے اور اس میں شامل تمام اراکین بشمول چیئرمین ڈاکٹر قبلہ ایاز متعلقہ قوانین میں ترمیم چاہتے ہیں۔

اسلامی نظریاتی کونسل کے آج ہونے والے اہم اجلاس میں مذکورہ معاملے پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔ خیال رہے کہ کونسل کے چیئرمین ڈاکٹر ایاز متعدد مرتبہ اور مختلف مواقع پر ایک ساتھ 3 طلاقیں دینے کے اقدام پر تحفظات کا اظہار کرچکے ہیں۔

اسلامی نظریاتی کونسل کے ایک محقق نے بتایا کہ کونسل میں شامل اراکین کی اکثریت چاہتی ہے کہ بیک وقت 3 طلاقیں دینے والے شخص کو سزا دی جائے۔

دوسری جانب کچھ اراکین اس طرح دی گئیں طلاقوں کو اہلِ تشیع اور اہلِ حدیث مکتبہ فکر کی طرح غیر موثر قرار دینے کے خواہاں ہیں۔ اسلامی نظریاتی کونسل کے رکن کا کہنا تھا کہ ہم پر شریعت کے مطابق تجاویز دینے کی اہم ذمہ داری ہے۔

Spread the love
  • 9
    Shares

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں