شام کے کرد جنگجوؤں کو اسلحہ کی سپلائی بند کردی،ترکی کو امریکی پیغام

ترکی

ترکی ایوان صدر کے ترجمان اورامریکی قومی سلامتی کے مشیر کی ٹیلی فونک گفتگو،اسلحہ فراہم نہ کرنے کی یقین دہانی
انقرہ: امریکی حکام کی طرف سے ترکی کو بتایا گیا ہے کہ امریکا نے شام کے کرد جنگجوؤں کو اسلحہ کی فراہمی روک دی ہے۔ میڈیا روپرٹس کے مطابق امریکی حکام کی طرف سے یہ دعویٰ ایک ایسے وقت میں کیا گیا ہے جب شمالی شام میں ترک فوج کردوں کے خلاف گذشتہ نو دنوں سے کارروائی کررہی ہے۔ امریکا نے متعدد بار ترکی سے کارروائی روکنے کا مطالبہ کیا ہے مگر ترکی کا کہنا ہے کہ کردوں کو امریکا کی عسکری حمایت حاصل ہے۔خبر رساں داروں کے مطابق ترک حکام نے کہاکہ امریکا نے پیغام دیا ہے کہ اس نے کرد ملیشیا پیپلز پروٹیکشن یونٹ کو اسلحہ کی فراہمی بند کردی ہے۔امریکا کی جانب سرکاری طورپر اس طرح کے کسی اقدام کی تصدیق یا ترید سامنے نہیں آئی۔ شام میں لڑنے والے کرد جنگجوؤں کو امریکا کی طرف سے فضائی مدد فراہم کرنے، اسلحہ پہنچانے اور ترکی مخالف کردستان ورکرز پارٹی کو دفاعی مدد بہم پہنچانے پرانقرہ واشگٹن کے خلاف سخت برہم ہے۔ترک میڈیا کے مطابق ترک ایوان صدر کے ترجمان ابراہیم قالن اور امریکی قومی سلامتی کے مشیر ایچ آر میکسماسٹر کے درمیان ٹیلیفون پر بات چیت ہوئی۔ بات چیت میں امریکی قومی سلامتی کے مشیر نے یقین دہانی کرائی کہ امریکا اب شام میں کردوں کو اسلحہ فراہم نہیں کرے گا۔

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں