اگر میں چاہتی تو کبھی پاکستان نہ چھوڑتی، علاج کے لیے باہر جانا پڑا، ملالہ یوسفزئی

ملالہ یوسفزئی

پاکستان کا مستقبل اس کے لوگ ہیں، ہمیں بچوں کی تعلیم میں سرمایہ کاری کرنی چاہیے، ملالہ

طالبان حملے میں زخمی ہونے والی اور پھر نوبل انعام حاصل کرنے والی طالبہ پاکستان کا فخر ملالہ یوسفزئی آج پانچ سال بعد پاکستان پہنچ گئیں۔ ملالہ یوسف زئی نے وزیر اعظم ہاوس میں تقریب سے خطاب کیا۔  خطاب کے دوران ملالہ کا کہنا تھا کہ یقین نہیں آرہا کہ اپنے ملک میں ہوں، جب کہیں سفر کرتی تھی تو تصور کرتی تھی کہ یہ پاکستان ہے۔

loading...

ملالہ یوسفزئی نے کہا کہ ابھی 20 سال کی ہوں، زندگی میں بہت کچھ دیکھا، اگر میں چاہتی تو کبھی بھی اپنے ملک کو نہیں چھوڑتی، یہاں کے ڈاکٹروں نے میری سرجری کی اور جان بچائی، مجھے مزید علاج کے لیے باہر جانا پڑا پھر وہیں اپنی تعلیم جاری رکھی۔

انہوں نے کہا کہ ہمیشہ سے خواب تھا پاکستان جاؤں، وہاں بنا کسی خوف کے گلیوں میں گھوموں اور لوگوں سے ملوں، اپنے پرانے گھر جاؤں، جیسا پہلے تھا سب ویسا ہی ہو۔ ملالہ کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان کا مستقبل اس کے لوگ ہیں، ہمیں بچوں کی تعلیم میں سرمایہ کاری کرنی چاہیے۔

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں