“یہ کانٹا ہے”۔۔۔ یہاں گاڑی کھڑی کرنا منع ہے۔

یہ کانٹا ہے

میرا معصومانہ سوال ۔۔ اُف، یہ کانٹا کیا ہے؟؟

سفر کے دوران مجھے اکثر جگہوں پر سڑک کے کنارے بڑا بڑا لکھا ہوا نظر آتا تھا۔ ” یہ کانٹا ہے”۔

آپ کو بھی یہ عبارت پڑھ کر میری طرح الجھن تو ہوتی ہوگی۔

اب ایسا بھی نہیں کہ میں نے کبھی کسی سے دریافت نہ کیا ہویا میرے والدین نے میری پریشانی دور کرنے کی کوشش نا کی ہو۔ مگران کا صرف اتنا کہنا میرے لئے کافی نہ تھا۔ ‘بیٹا یہ کانٹا ہے، اس پر گاڑیوں کا وزن کیا جاتا ہے۔

آخر کار جب میں اس قابل ہوئی کہ اپنی تشنگی کو خود سے دور کر سکوں اور تحقیق کر سکوں کہ یہ کانٹا کیا ہے۔ میں اپنے جیسے ان لوگوں کی معلومات کے لئے اس ” کانٹے” سے متعلق معلومات شیئر کررہی ہوں۔ تاکہ ان کے تجسس کو ختم کرسکوں۔

ہم سب ایک شہر سے دوسرے شہر میں سفر کرتے ہیں۔  جی ٹٰی روڈز یا یا موٹر وے  پر اکژ ٹرکوں کا وزن کرنے والے کانٹے بنے ہوئے دکھائی دیتے ہیں۔

یہ کانٹا ہے

کانٹا جسے انگلش میں weigh station بھی کہتے ہیں۔ مال بردار ٹرکوں کے وزن کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ بڑی ملز کے باہر بھی ایسے کانٹے ہوتے ہیں۔ جن پر مل یا فیکٹری میں اپنا مال بیچنے یا خریدنے والے ٹرکوں کا وزن کیا جاتا ہے۔

ان کانٹوں پر دو طرح سے وزن کیا جاتا ہے۔

1۔ صرف ٹرک کا وزن۔

2۔ ٹرک کا وزن اس پر لدے ہوئے سامان کے ساتھ۔

کانٹا زیادہ تر کنکریٹ اور لوہے سے بنایا جاتا ہے اور کانٹے کے پیمانے میں استعمال ہونے والی ٹیکنالوجی تین اقسام کی ہوتی ہے۔

مزید پڑھیں۔  فواد اور قریشی بازی لے گئے

سب سے جدید ٹیکنالوجی کو ‘لوڈ سیل سسٹم’ “Load Sale System” کہتے ہیں۔

loading...

لوڈ سیل سسٹم میں ایک یا ایک سے زیادہ پیمائش کے آلات نصب ہوتےہیں۔ ہر آلے یا Strain guage کے ساتھ ایک تار لگی ہوتی ہے۔ جو لوڈ سیل پر وزن پڑنے سے پچک جاتی ہے اور ایک کرنٹ  جنکشن باکس کی جانب ٹرانسمٹ کرتی ہے. جو کانٹے یا پیمانے پر پڑنے والے وزن کی مقدار کا حساب کرتا ہے۔

کانٹے کے لیے استعمال ہونے والی دوسری ٹیکنالوجی  ‘بینڈنگ پلیٹ’ “Bending Plate” ہے۔

بینڈنگ پلیٹ ٹیکنالوجی میں دھاتی پلیٹیں لگی ہوتی ہیں۔ یہ دھاتی پلیٹیں مزید وزن کرنے والے پیمانے کے ساتھ جڑی ہوتی ہیں۔ جب کانٹے پر وزن ڈالا جاتا ہے تو ہر پیلٹ اس کے اوپر پڑنے والے وزن کی پیمائش کرتی ہے۔ بعد ازاں تمام پلیٹوں پر پڑنے والے وزن کو جمع کرنے سے پورے ٹرک کا وزن معلوم ہو جاتا ہے۔

تیسری ٹیکنالوجی جو کانٹے کے لیے استعمال ہوتی ہے اسے ‘پیزو الیکڑک’ “Piezoelectric” کہا جاتا ہے۔

پیزو الیکڑک میں کنڈیکٹرز کے ساتھ سینسرز لگے ہوتے ہیں۔ ان سینسرز پر جب وزن ڈالا جاتا ہے۔ تو دباو پڑنے سے کنڈیکٹرز میں سے گزرنے والے کرنٹ کے والٹیج میں تبدیلی واقع ہوتی ہے۔ سینسرز کنڈیکٹرز کے والٹیج میں ہونے والی اس تبدیلی کو نوٹ کرتے ہیں اور کانٹے پر پڑنے والے ٹوٹل وزن کو جمع کرتے ہیں۔

اب ہم بات کرتے ہیں کہ کانٹے پر ٹرک کا وزن کیسے کیا جاتا ہے۔

ٹرک کے وزن کرنے کے لیے تین طریقے ہیں۔

1۔ سنگل ایکسل Single Excel —

مزید پڑھیں۔  کے الیکٹرک نے احتجاج کے بعد لوڈشیڈنگ میں مزید اضافہ کردیا

اگر کانٹے میں صرف ایک سکیل یا پیمانہ لگا ہوا ہے۔ تو پھر ٹرک کے پہلے فرنٹ ٹائروں کا کانٹے پر لا انکا وزن کیا جاتا ہے۔ پھر ٹرک کے پچھلے ٹائروں کا وزن کر کے تمام وزن کو آپس میں جمع کر دیا جاتا ہے۔

2۔ آٹو میٹک کنڑولر   Automatic Controller —

اگر کانٹے میں ایک سے زیادہ پیمانے لگے ہوئے ہیں۔ تو پھر ٹرک کو ایک ہی دفعہ میں کانٹے کے اوپر کھڑا کر کے وزن کر لیا جاتا ہے۔ یہ تمام پیمانے ایک آٹو میٹک کنڑولر سے منسلک ہوتےہیں۔ جو تمام پیمانوں کے وزن کو جمع کر کے کمپیوٹر سکرین پر ظاہر کر دیتا ہے۔

3۔ سینسرز ٹیکنالوجی Sensors Technology —

یہ طریقہ کار سب سے جدید ہے۔ اس میں باقی دو طریقوں کے برعکس ٹرک کو کانٹے کے اوپر مکمل کھڑا نہیں کیا جاتا۔ اگر کانٹے کے پیمانے میں سینسرز ٹیکنالوجی استعمال کی گئی ہے۔ تو پھر ٹرک کانٹے کے اوپر سے گزار دینے سے ہی وزن کرلیا جاتا ہے۔

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں