بلوچستان میں ایڈز کے مریضوں میں اضافہ

ایڈز

بلوچستان میں ایڈز کےمریضوں کی تعداد پانچ ہزار تک پہنچ گئی ہے، مختلف جیلوں میں 71 قیدیوں میں ایڈز کا مرض پایا گیا ہے جبکہ کوئٹہ میں دس خواجہ سراؤں میں ایڈز کےوائرس کاانکشاف ہوا ہے، صوبے میں ایڈز کے مریضوں میں 26 بچے شامل ہیں۔

صوبائی مینیجرایڈز کنٹرول پروگرام ڈاکٹرافضل خان زرکون نے کوئٹہ میں دیگر متعلقہ حکام کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ بلوچستان میں ایڈز کےمریضوں کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے۔

مریضوں کی تعداد پانچ ہزارتک پہنچ گئی ہے، بلوچستان ایڈزکنٹرول پروگرام سےرجسٹرڈ مریضوں کی تعدادایک ہزار 334 ہےجن میں سے  911 مریضوں کو علاج معالجہ کی سہولت فراہم کی جارہی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ایڈز کےمریضوں میں سےایک ہزار 33 مریض کوئٹہ جبکہ 301 تربت میں ر جسٹرڈہیں اس کے علاوہ قلعہ سیف اللہ،ژوب، شیرانی، گوادر، لورالائی، لسبیلہ، نوشکی، قلعہ عبداللہ اور پشین میں بھی ایڈز کےکیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔

ڈاکٹرافضل زرکون نے بتایاکہ کوئٹہ، گڈانی، تربت اور دیگر جیلوں میں چار ہزار سے زائد مریضوں کا ایچ آئی وی ٹیسٹ کیا گیا، ان میں سے 71 قیدیوں میں ایڈز کا مرض پایا گیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ بلوچستان میں ایڈز کاشکار ہوکرمرنےوالےمریضوں کی تعداد 231 ہے،اس کے علاوہ کوئٹہ میں خواجہ سراوں کا ایچ آئی وی ٹیسٹ بھی کیا گیا ہے، دس خواجہ سراوں میں ایڈز کے وائرس کا انکشاف ہوا ہے۔

ڈاکٹر افضل زرکون نے بتایا کہ کوئٹہ اورتربت میں ایڈز کے طبی مراکز قائم کئے گئے ہیں، اس کے علاوہ صوبے کے تمام اضلاع میں ایڈز کی سکریننگ کی سہولت مہیا کی گئی ہے۔

Spread the love
  • 1
    Share

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں