ہاروی وائنسٹن کے خلاف ایشلے جڈ کا جنسی ہراساں کا مقدمہ خارج

جنسی ہراساں

خواتین و اداکاراؤں کا ریپ اور انہیں جنسی طور پر ہراساں کرنے کے حوالے سے جنسی جرائم کے مقدمات کا سامنا کرنے والی ہولی وڈ پروڈیوسر 66 سالہ ہاروی وائنسٹن کے خلاف امریکی عدالت نے جنسی ہراساں کا ایک مقدمہ خارج کردیا۔

اگرچہ ہاروی وائنسٹن پر خواتین کا ریپ کرنے کے الزام میں فرد جرم بھی عائد کی جا چکی ہے اور انہیں نظر بند بھی کیا جا چکا ہے، تاہم انہیں اداکارہ ایشلے جڈ کی جانب سے دائر کیے گئے جنسی طور پر ہراساں کے مقدمے سے بری کردیا گیا۔

ہاروی وائنسٹن پر سب سے پہلے اکتوبر 2017 میں ایشلے جڈ سمیت متعدد اداکاراؤں اور خواتین نے جنسی طور پر ہراساں کرنے اور ریپ کے الزامات لگائے تھے۔

الزامات سامنے آنے کے بعد لاس اینجلس اور لندن میں ہاروی وائنسٹن کے خلاف تحقیقات کا بھی آغاز کیا گیا تھا، جب کہ گزشتہ برس ان پر لاس اینجلس کی عدالت نے جنسی جرائم کے تحت 2 بار فرد جرم بھی عائد کی۔

-ایشلے جڈ ان اداکاراؤں میں شامل ہیں، جنہوں نے فلم ساز پر سب پہلے الزام لگایا
ہاروی وائنسٹن نے تمام الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ انہوں نے تمام خواتین سے رضامندی کے تحت تعلقات استوار کیے۔

ہاروی وائنسٹن کے خلاف 50 سالہ ایشلے جڈ نے مئی 2018 میں امریکا کی عدالت میں باقاعدہ مقدمہ دائر کروایا تھا۔

ایشلے جڈ نے ہاروی وائنسٹن پر بدنام کرنے اور کیریئر تباہ کرنے سمیت ان پر جنسی طور پر ہراساں کرنے کا الزام بھی لگایا تھا۔

اداکارہ کی جانب سے دائر کی درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا تھا کہ ہاروی وائنسٹن نے انہیں جنسی تعلقات استوار نہ کرنے کے بعد بدنام کیا اور ان کے کیریئر کے لیے رکاوٹیں کھڑی کیں۔

نیہا کاکڑ نے سوشل میڈیا صارفین کو کھری کھری سنا دیں

درخواست میں فلم ساز پیٹر جیکسن کی فلم سیریز ’لارڈ آف دی رنگز‘ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا تھا کہ اداکارہ کو اس فلم میں ہاروی وائنسٹن کے کہنے پر کاسٹ نہیں کیا گیا۔

درخواست میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ ہاروی وائنسٹن نے ’لارڈ آف دی رنگز‘ کی ٹیم کو اداکارہ کو کاسٹ کرنے سے روکا، جس وجہ سے اداکارہ کا کیریئر اونچائی پر نہیں پہنچ سکا، کیوں کہ یہ فلم سیریز انتہائی کامیاب ثابت ہوئی۔

تاہم اب لاس اینجلس کی اسی عدالت نے اداکارہ کی جانب سے دائر کیے گئے جنسی طور پر ہراساں کے مقدمے کو خارج کردیا۔

خبر رساں ادارے ’اے ایف پی‘ نے بتایا کہ لاس اینجلس کی ڈسٹرکٹ کورٹ کے جج فلپ گٹریزے نے ہولی وڈ پروڈیوسر کو جنسی طور پر ہراساں کے الزامات سے بری کرتے ہوئے ان کے خلاف مقدمہ خارج کردیا۔

عدالتی فیصلے پر اداکارہ نے فوری طور پر کوئی رد عمل نہیں دیا—فوٹو: ورائٹی
رپورٹ کے مطابق اگرچہ عدالت نے فلم پروڈیوسر کو جنسی طور طور پر ہراساں کرنے کے مقدمے سے بری کیا، تاہم عدالت نے کہا کہ ہاروی وائنسٹن پر ہتک عزت کا مقدمہ چل سکتا ہے۔

عدالت نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ ایشلے جڈ نے جن دعووں کے تحت ہاروی وائنسٹن پر مقدمہ دائر کیا، وہ جنسی طور پر ہراساں کرنے کے ضمرے میں نہیں آتے۔

عدالت نے کہا کہ ایشلے جڈ فلم ساز پر کیریئر تباہ کرنے اور بدنام کرنے کے تحت ہتک عزت کا مقدمہ دائر کر سکتی ہیں۔

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں