شہباز شریف کا ڈیم کا مطالبہ ایک سازش ہے: فیصل واوڈا

قومی اسمبلی اجلاس

وفاقی وزیر برائے آبی وسائل فیصل واوڈا کی تقریر سے پہلے ہی اپوزیشن جماعتوں نے قومی اسمبلی اجلاس سے واک آؤٹ کیا۔

اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی زیر صدارت اجلاس میں اس وقت گرما گرمی پیدا ہوئی جب قائد حزب اختلاف شہباز شریف اور سابق صدر آصف علی زرداری کی تقریر کے بعد وفاقی وزیر برائے آبی وسائل فیصل واوڈا اظہار خیال کے لیے کھڑے ہوئے۔

فیصل واوڈا کے تقریر شروع کرتے ہی اپوزیشن جماعتوں نے قومی اسمبلی اجلاس کا بائیکاٹ کر دیا لیکن وفاقی وزیر نے اپنی تقریر جاری رکھی۔

فیصل واوڈا نے شہباز شریف کی تقریر پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ اپوزیشن لیڈر نے اپنی تقریر کے دوران مہمنڈ ڈیم کے لیے سنگل بڈنگ کی نشاندہی کی لیکن شاید پیمرا رولز انگریزی میں ہونے کی وجہ سے انہیں سمجھ نہیں آئے، آئندہ میں پیمرا رولز کا اردو میں ترجمہ کروا دوں گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ شہباز شریف نے کہا کہ فنانشنل بڈ ایوارڈ کی گئی لیکن ایسا نہیں ہے بلکہ فنانشنل بڈ ایوارڈ نہیں ہوئی بلکہ کھلی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ بے ایمانی اور بربریت سے اس ملک کو لوٹا گیا، 54 سالوں سے یہ منصوبہ فائلوں میں تھا۔

مزید پڑھیں:10سال بعد زیرِ سمندر تیل و گیس کی تلاش کا آغاز

وفاقی وزیر نے کہا کہ اپوزیشن کو کچھ نہیں ملا تو مفادات کا تنازع کھڑا کر دیا، پاکستان کے مسئلے حل ہو گئے تو اپوزیشن کی سیاست دفن ہو جائے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ اپوزیشن والوں میں جواب سننے کی ہمت نہیں ہے، ان لوگوں کے لیے جیل ہے یا جلا وطنی۔

فیصل واوڈا نے کہا جیل سے  آنے والے مجرم نے حقائق مسخ کر کے ایوان کو گمراہ کرنے کی کوشش کی۔

انہوں نے کہا کہ جواب کا وقت آیا تو منہ چھپا کر بھاگ گئے، مفادات کے ٹکراؤ کا معاملہ اٹھانے کا مقصد ڈیم کو متنازع بنانا ہے۔

فیصل واوڈا کی تقریر کے دوران ہی پیپلز پارٹی کی رکن اسمبلی شگفتہ جمانی نے کورم کی نشاندہی کر دی جس پر اسپیکر قومی اسمبلی نے فیصل واوڈا کی تقریر رکوا کر ممبران کی گنتی شروع کر وا دی۔

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں