ہیکرز کی لاکھوں اکاونٹس تک رسائی

ہیکرز

برطانوی کمپنی نیشنل سائبر سیکیورٹی سینٹر(این سی ایس سی) کے مطابق ہیکرز دنیا بھر میں 36 لاکھ انٹرنیٹ صارفین کے اکاونٹس اور ان کی پرسنل معلومات تک باآسانی رسائی حاصل کرسکتے ہیں۔

دی گار جین میں شائع رپورٹ کے مطابق (این سی ایس سی) کے مطابق ہیکرز کی ان تمام لوگوں پر اور ان کی معلومات پر بہت ذیادہ نظر ہے اور کسی بھی وقت وہ ان کا تمام ڈیٹا چوری کرسکتے ہیں اور ان ہیکرز کی رسائی آسان بنانے میں ان تمام صارفین کی بھی کچھ غلطیاں ہیں جو اپنا پاس ورڈ صحیح نہیں لگاتے اور صرف پاس ورڈ ہی لکھ دیتے ہیں۔
اس کے علاوہ کمپنی نے انکشاف کیا ہے کہ 2 کروڑ 32 لاکھ صارفین نے 12345 لکھا ہوا ہے اور30 لاکھ 80 ہزار صارفین نے پاس ورڈ  کمپیوٹر کی بورڈ کے پہلے چھ حرف qwerty بطور پاس ورڈ استعمال کیا ہے۔

انٹرنیٹ کے متعلق برطانوی خفیہ ادارے جی سی ایچ کیو کے جاری منصوبہ کے تحت این سی ایس سی نے اس صورتحال میں انٹرنیٹ سکیورٹی  کے معاملات کو جانچنے کے لیے روزمرہ استعمال ہونے والے ایک لاکھ الفاظوں کا استعمال کر کے صارفین تک رسائی حاصل کی ہے اور مزکورہ رپورٹ تیار کی ہے۔

اس رپورٹ کے مطابق انٹرنیٹ صارفین اپنا پاس ورڈ اپنی پسند کی چیزوں کے  نام سے رکھتے ہیں اور  یہ پاس ورڈز دنیا کی مشہور چیزوں  کے نام ہوتے ہیں، اور ان کے بارے  جاننے  میں ہیکرز کو کوئی پریشانی نہیں ہوتی۔

ہیکرز (Hackers) سے بچنے کے آسان طریقے

ان کا مزید کہنا تھا کہ 2021 تک 42 فیصد لوگ ہیکرز کیطرف سے اپنا ڈیٹا چوری پونے کا شکار پوسکتے ہیں۔ برطانیہ میں 85 فیصد لوگ آن لائن شاپنگ کرتے ہیں اور ان میں سے صرف 15 فیصد صارفین کا مضبوط پاس ورڈ ہے جو ہیکرز آسانی سے توڑ نہیں سکتے۔

ان کے مطابق 4 لاکھ 32 ہزار انڑنیٹ صارفین ایشلے اور چار لاکھ بیس بزار مائیکل بطور پاس ورڈ نام استعمال کرتے ہیں۔

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں