فحش فلمیں دیکھنے والے ہوشیار ہو جائیں نہیں تو …

فحش فلمیں

لندن: انٹرنیٹ کے ذریعے فحش مواد کی فراوانی کے بعد بظاہر تو یوں محسوس ہوتا ہے کہ گویا ایک جنسی طوفان نے دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے۔ مگر سائنسدانوں نے ایک حالیہ تحقیق میں یہ چشم کشا انکشاف کیا ہے کہ فحش مواد کی فراوانی دراصل صحت مند جنسی رویے کی موت ثابت ہورہی ہے۔

اب سائنسدانوں نے ان کا ایک اور نقصان بھی بتا دیا ہے جو کسی نے سوچا بھی نہ تھا۔ ویب سائٹ sciencetimes.com کے مطابق برمنگھم ینگ یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے 1200لوگوں پر کی گئی نئی تحقیق میں بتایا ہے کہ جو لوگ فحش فلمیں دیکھنے کے عادی ہوتے ہیں ان کا کام کی جگہ پر رویہ بہت زیادہ غیراخلاقی ہوجاتا ہے۔

loading...

تحقیقاتی ٹیم کی سربراہ میلیزا لیویس ویسٹرن کا کہنا تھا کہ ”لوگوں کے اس غیراخلاقی روئیے کی وجہ سے نہ صرف ایسے لوگ جنس مخالف کے ورکرز کے لیے خطرناک ہو جاتے ہیں بلکہ ان لوگوں کے فراڈ اور دیگر ایسی سرگرمیوں میں بھی ملوث ہونے کا امکان ہوتا ہے۔

دنیا کی پہلی پورن یونیورسٹی کا افتتاح!

ہم اس سے قبل سمجھتے تھے کہ فحش فلمیں دیکھنے سے انسان کی انفرادی زندگی یا ازدواجی زندگی ہی متاثر ہوتی ہے مگر ہماری تحقیق میں یہ خیال غلط ثابت ہوا ہے۔ فحش فلمیں دیکھنے سے انسان اپنے روئیے میں جس اخلاق باختگی کا شکار ہوتا ہے اس سے اس کا دفتر اور دیگر اردگرد کے لوگ بھی بری طرح متاثر ہوتے ہیں۔“

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں