قتل عام سے کشمیریوں کے جذبہ حریت کو کمزور نہیں کیا جاسکتا ٗمیرواعظ

loading...

قتل عام کے ذریعے کشمیریوں کے جذبہ حریت کو ختم نہیں کیا جاسکتا ہے ٗ اجتماع سے خطاب
سرینگر : مقبوضہ کشمیرمیں حریت فورم کے چیئرمین میر واعظ عمر فاروق نے کہاہے کہ کشمیری عوام گزشتہ ستر برس سے اس حقیقت کے ساتھ جی رہے ہیں کشمیر ایک متنازعہ علاقہ ہے اور جسے اقوام متحدہ کی قراردادوں پرعمل درآمد کے ذریعے حل کیا جاسکا ہے ۔ کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق میر واعظ عمر فاروق نے جامع مسجد سرینگر میں ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ بھارت اپنے فوجیوں کے ہاتھوں نہتے نوجوانوں کے قتل عام کے ذریعے کشمیریوں کے جذبہ حریت کو کمزورکرنے میں ناکام ہو چکا ہے جس کا واضح ثبوت شہید نوجوانوں کے جنازوں میں بڑی تعداد میں لوگوں کی شرکت ہے۔انہوں نے بھار ت کو خبردار کیاکہ اگر وہ ایک کشمیری کو قتل کریگا تو10اورکشمیری کھڑے ہوجائیں گے۔انہوں نے کہاکہ قتل عام کے ذریعے کشمیریوں کے جذبہ حریت کو ختم نہیں کیا جاسکتا ہے ۔ کشمیری نوجوانوں کے قتل عام سے کشمیرکامسئلہ حل نہیں ہوسکتا،جبکہ گزشتہ7 دہائیوں سے کشمیر ی اسی حقیقت کے ساتھ جی رہے ہیں کشمیر ایک متنازعہ علاقہ ہے اور تنازعہ کشمیر کا حتمی حل ہوناابھی باقی ہے۔انہوں نے کہا کہ آئے روز تعلیم یافتہ نوجوان شہید ہورہے ہیں اور کچھ لوگ سمجھتے ہیں کہ سب نوجوانوں کو ختم کرکے مسئلہ حل ہوجائیگا لیکن وہ یہ بات بھول جاتے ہیں کہ ان نوجوانوں نے بھارتی ظلم و تشدد کا مقابلہ کرنے اور مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے بھارت کو للکارا ہے جب تک سرکار صرف تشدد اور ظلم و زیادتی سے کام لیتی رہیگی تب تک یہ سلسلہ جاری رہے گا ۔ انہوں نے کہا گزشتہ70برس سے کشمیریوں کی کئی نسلوں نے مسئلہ کشمیرکے حتمی حل کاانتظارکیاہے ،اورلاکھوں لوگ اس انتظارمیں اس دنیاسے رْخصت ہوگئے۔میر واعظ نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کا حل تلاش کیا جاسکتا ہے بشرطیکہ حقائق کو صدق دل کے ساتھ تسلیم کرکے فریقین ، انسانیت اور باہمی عزت و احترام کے ساتھ اس دیرینہ مسئلے کے حل پر پوری توجہ دیں تاکہ حقیقی امن کی طرف بڑھا جاسکے۔ انہوں نے کہاکہ مسئلہ کشمیر کوئی دوطرفہ سرحدی یا علاقائی تنازعہ نہیں ہے بلکہ یہ کنٹرول لائن کے آرپاررہنے والے ہزاروں اورلاکھوں کشمیریوں کے سیاسی مستقبل کا مسئلہ ہے۔انہوں نے کہاکہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں مسئلہ کشمیرکے پرامن حل سے متعلق کئی قراردادیں منظورہونے کے علاوہ بھارت کے پہلے وزیراعظم پنڈت نہرونے کشمیریوں کواپنے مستقبل کافیصلہ خود کرنے کا موقعہ دینے کی یقین دہانی کرائی تھی لیکن نہ توعالمی ادارے کی قراردادوں پرعمل درآمدہوااورنہ ہی بھارت نے اپنے وعدے پورے کئے ۔میرواعظ نے کہا کہ بھارتی تحقیقاتی ادارے این آئی اے کی طرف سے حریت قیادت کو ہراساں اور تنگ کرناان کے خلاف الیکٹرانک اور سوشل میڈیا کے ذریعہ بے بنیاد پروپیگنڈا اور ان کے اہل خانہ کو ہراساں کرنے کا عمل صرف انہیں بدنام کرنے اور کشمیریوں کے جذبہ حریت کو کمزورکرنے کیلئے کیا جارہا ہے ۔

مزید پڑھیں۔  ریٹرننگ افسر نے عمران خان کے این اے 243 سے کاغذاتِ نامزدگی پر اعتراضات کا تحریری فیصلہ جاری کردیا

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں