یہ قوم حوانیت کی انتہا پر پہنچ گئی ہے ! 12 سالہ لڑکی کے ریپ کے بدلے میں 17 سالہ لڑکی کا ریپ

اکستان کے صوبہ پنجاب کے شہر ملتان جسے اولیاء کی سرزمین کہا جاتا ہے کے علاقے مظفرآباد میں ایک ہی خاندان کے لوگوں کے فیصلے پر ایک 17 سالہ لڑکی کو انتقامی طور پر جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا گیا ہے۔
مقامی پولیس کے مطابق ایک ہی خاندان کے دو گروہوں کے افراد، جن میں خواتین بھی شامل ہیں، نے کچھ روز قبل ایک 12 سے 14 سالہ لڑکی کے ساتھ مبینہ جنسی زیادتی کے واقعے میں آپس میں فیصلہ کیا کہ اس میں ملوث ملزم کے خاندان کی کسی لڑکی کے ساتھ بھی اسی طرح انتقامی جنسی زیادتی کی جائے۔
محمد امین نامی شخص کے اس فیصلے پر عمل درآمد کرتے ہوئے ملزم عمر وڈا کی 17 سالہ چچا زاد بہن کے ساتھ بدلے کہ طور پر جنسی زیادتی کی گئی۔ پولیس کے مطابق اس کے بعد دونوں فریقین میں مبینہ طور پر صلح ہو گئی۔
پولیس کو معاملے کا علم وومن پولیس سٹیشن ملتان میں درج ایک درخواست کے ذریعے ہوا۔ ان کا کہنا تھا کہ 17 سالہ لڑکی کو انتقامی طور پر جنسی زیادتی کا نشانہ بنانے کے بعد دونوں فریقین میں صلح ہو گئی جس کا صلح نامہ بعد میں تفتیش کے دوران پولیس کو بھی دکھایا گیا تھا۔
’لڑکی کی میڈیکل رپورٹ میں تصدیق ہوئی ہے کہ اس کے ساتھ جنسی زیادتی کی گئی ہے۔ پولیس نے اپنی مدعیت میں فیصلہ دینے والے سرپنچ محمد امین اور فریقین کے 26 افراد کے خلاف مقدمہ درج کر لیا ہے۔‘

Comments

comments

مزید پڑھیں۔  میرے موکل کے خلاف بے بنیاد چارج شیٹ تیار کی گئی، فاروق ایچ نائیک

اپنا تبصرہ بھیجیں