جرمنی مسجد دھماکہ کیس ، مجرم کو دس سال قید

مسجد

جرمنی کی ایک عدالت نے مسجد میں بم دھماکے کیس کے مجرم کو 10 سال کی سزا سنادی۔
نینو کوہلر نامی مجرم نے 26 ستمبر 2016 کو خودساختہ بم بنا کر ڈریسڈن میں قائم مسجد پر حملہ کیا تھا جس کے نتیجے میں مسجد کا بیرونی دروازہ تباہ ہو گیا تھا تاہم اندر موجود امام اور فیملی کے افراد محفوظ رہے تھے۔

loading...

اسی دن مجرم نینو کوہلر نے ایک اور خودساختہ بم سے شہر کے وسط میں قائم
کنونشن سینٹر پر حملہ کیا جہاں 26 سال پرانا شمالی اور مشرقی جرمنی کا تہوار منعقد ہونا تھا۔
واضح رہے کہ وفاقی جرمن صوبے سیکسنی کے دارالحکومت ڈریسڈن میں ہی اسلام مخالف مہم (پی ای جی آئی ڈی اے) نے جنم لیا تھا۔

ضلعی عدالت نے مجرم کو اقدام قتل، غیر قانونی طور پر دھماکا خیز مواد رکھنے
اور دو آتشیں حملے کے جرم ثابت ہونے پر 9 سال اور 8 ماہ کی قید سنائی۔
اس سے قبل جب مجرم کو دسمبر 2016 کو گرفتار کیا گیا تو اس نے جج کو کہا تھا کہ ’وہ کسی کو نقصان نہیں پہنچا چاہتا تھا‘۔

Comments

comments

مزید پڑھیں۔  نیب نے عام انتخابات میں حصہ لینے والے امیدواروں کی جانچ پڑتال کیلئے سکروٹنی فسیلی ٹیشن سیل قائم کردیا

اپنا تبصرہ بھیجیں