؟کیا آپ جانتے ہیں دنیا کے دلفریب منجمد عجوبے کون کونسے ہیں

آئس لینڈ:
آئس لینڈ اپنے گرم پانی کے چشموں کے حوالے سے جانا جاتا ہے لیکن جب یہ گر م گلیشئیر کے نیچے پھوٹنے ہیں تو ان د سے برف میں ایسے غار بنتے ہیں جو سینکڑوں فٹ طویل ہوتے ہیں.
ان غاروں میں پیچ وخم کھاتے ہوئے راستے اور چھتئیں ششدر کردینے والا نظارہ پیش کرتی ہیں ۔
آرجینوٹینیا 
فٹ بال میں اپنی اعلیٰ ترین مہارت کے علاوہ ارجنٹائن اپنے گیریٹو مور مینوگلیشئیر کے حوالے سے بھی مانا جاتا ہے یہ ملک کے جنوب مغربی صوبے سانتا کروز میں واقع لاس گلیشئیر ز نیشنل پارک کا حصہ ہے ۔
 
یہ گلیشیئر 250کلومیڑ کے رقبے پر محیط ہے۔ یہ دنیا میں تازہ پانی کا تیسرا سب سے بڑ ا ذخیرہ ہے ۔ یہ گلیشیئر 170میٹر موٹی برف کی تہہ پر مشتمل ہے اور ان تین گلیشئیر ز میں سے ایک ہے جس کا رقبہ مسلسل بڑھ رہا ہے۔
انٹار کٹکا:
اگر آپ کا خیال تھا کہ آئس برگ ہمیشہ سفید ہوتے ہیں تویہ بات درست نہیں ہے ۔ اصل میں بات یہ ہے کہ برف میں سفیدی بلبلوں کی وجہ سے پیدا ہوتی ہے جو برف میں رہ جاتے ہیں اور پھر روشنی ان بلبلوں سے ٹکرا کر ہر جانب بکھر تی ہے لہذا برف سفید نظر آتی ہے
 
تاہم تاہم آئس برگ میں نیلی دھاریاں اس وقت بنتی ہیں جب آئس برگ میں پڑنے پڑنے والے شگاف پانی سے بھرجاتے ہیں اور اس سے پہلے کہ ان میں پلنے بنیں وہ پانی جم جاتا ہے۔
ان آئس برگ میں بھورے ، سیا ہ اور پیلے رنگ کی دھاریاں بھی بن جاتی ہیں۔
آئس ڈسک 
گھومتی ہوئی برف کی ٹکیاں یا ڈسک ایک ایسا قدرتی مظہر ہے جو دنیا میں شاذ ونادر ہی نظر آتا ہے ۔ بر ف کی گھومتی ہوئی ان ٹکیوں کے سائز بہت مختلف ہوتے ہیں ۔یہ ایک فٹ سے لیکر 650حجم کی ہوتی ہے تاہم عام طور پر یہ برفانی ٹکیاں بہت پتلی ہوئی ہیں ۔
بڑ ی اور دیوہیکل برفانی ٹکیاں سویڈن میں دیکھی گئی ہیں ۔اڑن طشتری کی نظر یے کے شوقین کہتے ہیں ۔ کہ یہ خلائی مخلوق کا کام ہے لیکن سائنسدان کہتے ہیں کہ برف کی ڈسک کا بننا ایک قدرتی مظہر ہے
اور یہ اس وقت بنتی ہیں جب سردیوں میں پانی بہنے کی رفتار آہستہ ہوتی ہے۔
آئس سرکلو 
برف کے دائرے ۔ ان دائروں کی تشکیل میں پر اسراریت کا عنصر شامل نہیں ہے کیونکہ یہ دائرے ایک امریکی آرٹسٹ جم ڈینی اوپن نے سائبریا کی جھیل بائیکل میں جاکر بنائے تھے ۔
سائبریای کی یہ جھیل چاروں جانب خشکی سے گھرا ہوا دنیا میں پانی کا سب سے بڑا ذخیرہ ہے جم نے یہ دائرے بنانے کے لئے طویل سفر طے کیا اور زبر دست تیز ہواکے باوجود دائروں کا یہ ڈیزائن بنایا ۔
اسے دنیا کی سب سے بڑی ڈرائنگ قراد دیا گیا ہے۔ کیونکہ اس ڈرائنگ کا رقبہ 9مربع میل ہے۔
 کو ہ اپلیں  آسٹریلیا 
آسٹریلیا میں واقع کو ہ اپلیں (Alps) میں برفانی غاروں کا دنیا میں سب سے بڑا سلسلہ ایئزریزن ویٹ،، ہے ۔ آسڑیلیا کے نیچر ل سائنٹسٹ ،، یولسٹ نے غاروں کے اس سلسلے کو 1879ء سرکاری طوردریافت کیا تھا اگرچہ مقامی شکاری ان غاروں کی موجودگی سے صدیوں سے آگاہ تھے
تاہم مذکورہ سائنسدان نے 25میل طویل اس سلسلے کے بارے میں ایک رپورٹ شائع کی لیکن یہ غارایک مرتبہ پھر دنیا کی نظروں سے اجھل ہو گے یہاں تک کہ 1920ء میں مہم جوئی کرنے والے ایک معروف مہم جو الیگزینڈ روان ماک نے ان غاروں تک پہنچنے کے روٹس مقرر کرکے انہیں دیگر مہم جو افراد کے مابین مقبول بنادیا ۔
ان کے بعد ہی ان غاروں کی مقبولیت بڑھنا شروع ہوئی۔
زاؤ ونزن :۔ 
جاپان کا علاقہ زاؤنزن (Zoaonsen) ملک کے قدیم ترین گرم چشموں کا گھر ہے۔ یہ چسمے 110(بعد مسیح )دریافت ہوئے تھے لیکن جاپان کا رواؤنز ن اسکی ریزورٹ اپنے برف کے بنے ہوئے بھوتوں کی وجہ سے زیادہ مشہور ہے ۔
موسم سرما میں نظر آنے والا یہ خوفناک قدرتی منظر حقیقت میں ایک خاص قسم کا درخت ہے جو برف کی سخت پتلی تہوں سے ڈھک جاتا ہے اور یہ برف کئی ماہ تک ان درختوں کو چھپائے رکھتی ہے۔
دلچسپ بات یہ ہے کہ یہاں آنے والے سیاح ان منجمد درختوں کے درمیا ن موجود راستوں پر اس کی (Sbi)کرتے ہیں۔
Spread the love

Comments

comments

مزید پڑھیں۔  نیوزی لینڈ کی ٹیم کا دورہ پاکستان متوقع، کیویز بورڈ نے ٹیم بھیجنے پر غور شروع کر دیا

اپنا تبصرہ بھیجیں