ڈاکٹر عارف علوی پاکستان کے 13 ویں صدر منتخب، غیرسرکاری نتیجہ

ڈاکٹرعارف علوی

صدر مملکت کے لیے تحریک انصاف کے ڈاکٹر عارف علوی، پیپلز پارٹی کے اعتزاز احسن اور 4 اپوزیشن جماعتوں مسلم لیگ نواز، عوامی نیشنل پارٹی، متحدہ مجلس عمل اور پشتونخواء ملی عوامی پارٹی کے مشترکہ امیدوار مولانا فضل الرحمان کے درمیان مقابلہ تھا۔

پارلیمنٹ میں 432 میں سے 424 ووٹ ڈالے گئے۔ 6 ووٹ مسترد اور دو ارکان نے اپنا حق رائے دہی استعمال نہیں کیا۔ عارف علوی نے 212، مولانا فضل الرحمان نے 131 اور اعتزاز احسن نے 81 ووٹ حاصل کیے۔

اسی طرح پنجاب اسمبلی میں 354 میں سے 351 ارکان نے ووٹ ڈالے جب کہ سندھ اسمبلی میں 163 میں سے 158 ووٹ کاسٹ ہوئے۔

بلوچستان اسمبلی میں 61 میں سے 60 اراکین نے ووٹ ڈالا جبکہ ایک رکن نواب ثناء اللہ زہری نے اپنا ووٹ کاسٹ نہیں کیا۔ جب کہ خیبرپختونخوا اسمبلی کے 112 میں سے 111 ارکان نے ووٹ ڈالے، آزاد رکن امجد آفریدی نے اپنا ووٹ کاسٹ نہیں کیا۔

loading...

بلوچستان اسمبلی میں عارف علوی نے 46 اور مولانا فضل الرحمان نے 15 ووٹ حاصل کیے جب کہ پیپلز پارٹی کی اسمبلی میں کوئی نمائندگی نہیں اس لیے اعتزاز احسن کو کوئی ووٹ نہ ملا۔

صدارتی انتخابی فارمولے کے تحت سندھ، پنجاب اور خیبرپختونخوا اسمبلی کے مجموعی ووٹوں کو بلوچستان اسمبلی کے اراکین سے تقسیم کیا جائے گا۔

خیبرپختونخوا اسمبلی میں عارف علوی نے 78، مولانا فضل الرحمان نے 26 اور اعتزاز احسن نے 5 ووٹ حاصل کیے، صدارتی انتخاب کے فارمولہ کے تحت پی ٹی آئی امیدوار عارف علوی کو 41، مولانا فضل الرحمان کو 13 اور اعتزاز احسن کو 2 ووٹ ملے۔

مزید پڑھیں۔  امریکی صدر ڈونلڈٹرمپ پرالزام لگانے والی پورن سٹار سٹورمی ڈینیئلز ریاست اوہائیو کے شہر کولمبس سے گرفتار

سندھ اسمبلی میں پیپلز پارٹی کے امیدوار اعتزاز احسن کو 100 ووٹ اور عارف علوی کو 56 ووٹ ملے جب کہ مولانا فضل الرحمان کو ایک ووٹ ملا۔ انتخابی فارمولے کے تحت سندھ اسمبلی میں اعتزاز احسن نے 39 اور عارف علوی نے 22 ووٹ حاصل کیے۔

صدارتی انتخاب کے لیے چیف الیکشن کمشنر جسٹس (ر) سردار محمد رضا ریٹرنگ آفیسر ہیں جو حتمی نتیجے کا اعلان کریں گے۔

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں