شرجیل میمن کیس: اسسٹنٹ سپرنٹینڈنٹ سینٹرل جیل سمیت 6 افراد زیر حراست

چیف جسٹس

سب جیل کمرہ ہسپتال کے اندر مشکوک پارسل کی منتقلی کو دیکھا گیا‘ غیر ملکی شراب کی اصلی بوتلیں برآمد کی گئیں: پولیس

لگتا ہے رپورٹ میں ٹمپرنگ ہوئی: چیف سیکرٹری سندھ نے چیف جسٹس کے سامنے خون کی رپورٹس مشکوک قرار دیدیں

کراچی: کراچی کے سپتال میں سب جیل قرار دیے گئے شرجیل میمن کے کمرے سے شراب کی بوتلوں کی مبینہ برآمدگی کیس کے سلسلے میں اسسٹنٹ سپرنٹینڈنٹ سینٹرل جیل کوحراست میں لے لیا گیا۔ذرائع کے مطابق شرجیل میمن کے ذاتی ملازمین سمیت 6 افراد کو بھی حراست میں لیا گیا ہے جن میں اسپتال ملازمین اور پولیس اہلکار شامل ہیں۔کراچی پولیس چیف ڈاکٹر امیر شیخ نے کہا ہے کہ سی سی ٹی وی فوٹیجز میں مشکوک سرگرمیاں نظر آئی ہیں۔

loading...

انہوں نے کہا کہ فوٹیجز میں چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار کے جانے کے بعد ایک تھیلا نیچے جاتا نظر آرہا ہے پھر ایک گھنٹے سے دو گھنٹوں کے بعد واپس آتا ہے۔پولیس کے مطابق بوٹ بیسن تھانے میں درج مقدمے اور کیس پراپرٹی میں شراب کی وہ اصلی بوتلیں موجود ہیں جب کہ ضیاالدین اسپتال کی تمام سی سی ٹی وی فوٹیج بھی کیس کا حصہ بنائی گئی ہے۔ دوسری جانب سپریم کورٹ میں ایک کیس کی سماعت کے دوران چیف سیکریٹری سندھ نے شرجیل میمن کے خون ٹیسٹ کی رپورٹ کو مشکوک قرار دیا۔

چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار سے مکالمے کے دوران انہوں نے کہا کہ لگتا ہے رپورٹ میں ٹیمپرنگ ہوئی ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ ہمارے پاس سب جیل اور اسپتال کی سی سی ٹی وی فوٹیج موجودہے، معاملے کی تحقیقات کرکے رپورٹ دیں گے۔(مانیٹرنگ ڈیسک)

مزید پڑھیں۔  شمالی کوریا کی روس سے امریکہ کے رویے غالبانہ کی شکایت

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں