آج سے نئے پاکستان کی شروعات ہے ، عمران خان

پاکستان

لوئردیر/سوات:پاکستان تحریک انصاف کے چیئر مین عمران خان نے احتساب عدالت کی جانب سے سابق وزیر اعظم محمد نوازشریف ٗ ان کی صاحبزادی مریم نواز اور کیپٹن ریٹائرڈ صفدر کیخلاف عدالتی فیصلہ پر رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ آج سے نئے پاکستان کی شروعات ہے

ہمارے ملک کے نظام میں صرف کمزور پکڑا جاتا تھا تاہم اس نظام نے پہلی بار کسی طاقتور کو سزا دی ٗاب بڑے بڑے ڈاکو اسمبلی نہیں جیل جائینگے ٗ 1998میں نوازشریف کے محلات کے سامنے جا کر احتجاج کیا ٗ کوئی سننے والا نہیں تھا ٗچھ بار شریف خاندان نے پنجاب میں حکومت کی، قوم کا سب سے بڑا ڈرامے باز شہبازشریف ہے ٗزرداری اور شریفوں نے کرپشن کیلئے ملک کے ادارے تباہ کئے ٗ امید ہے 26 جولائی کو پاکستان میں نئے پاکستان کا سورج اگے گا ۔

سوات میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ ان دو بھائیوں نے سیاست میں کرپشن شروع کی، لاہور میں لوگوں کو خریدا اور یہ سب ہمارے سامنے ہوا۔انہوں نے کہا کہ میں نے سیاست شروع کی تو پہلا شخص تھا جس نے کرپشن کی بات کی، 1998 میں ان کے محلات کے سامنے جاکر احتجاج کیا لیکن کوئی سننے والا نہیں تھا۔چیئرمین پی ٹی آئی نے کہاکہ آصف علی زرداری اور شریفوں نے کرپشن کرنے کیلئے ملک کے ادارے تباہ کیے، ادارے مضبوط ہوتے تو ان کو پکڑے جانا تھا، حکمران ادارے تباہ کرکے کرپشن کرتا ہے کیونکہ جب ادارے مفلوج ہوجائیں تو ملک تباہ ہوجاتا ہے۔عمران خان نے کہاکہ پاکستان کے پاس وسائل ہیں لیکن کرپشن کی دیمک نے ملک کو کینسر کی طرح کھالیا، آج بچہ بچہ مقروض ہے، یہ چور عوام کا پیسہ چوری کرکے باہر لے گئے۔

انہوں نے کہاکہ اللہ کا شکرگزار ہوں 22 سال پہلے یہ جدوجہد شروع کی، پہلی مرتبہ ایک طاقتور کو ملک کے انصاف کے نظام نے سزا دی، پہلے صرف کمزور لوگ جیلوں میں جاتے تھے اور طاقتور لوگوں کو پاکستان کے ادارے نہیں پکڑ سکتے تھے، آج سارے پاکستانیوں کو شکر ادا کرنا چاہیے کیونکہ یہ نئے پاکستان کی شروعات ہے۔چیئرمین پی ٹی آئی نے کہا کہ اب سے بڑے بڑے ڈاکو اسمبلی میں نہیں جائیں گے اور وزیر نہیں بنیں گے، بڑے ڈاکو اب جیلوں میں جائیں گے، انہیں سزائیں ہوں گی، امید ہے 26 جولائی کو پاکستان میں نئے پاکستان کا سورج اگے گا۔انہوں نے کہاکہ مجھے گندا کرنے کیلئے یہ لوگ بہت نیچے تک گئے اور ہماری خواتین کو بھی نہیں چھوڑا، یہ لوگ اتنے گرگئے کہ ایک خاتون سیگندی کتاب لکھوائی تاکہ مجھے گندا کرسکیں۔

مزید پڑھیں۔  نوازشریف ٗمریم نواز اور کیپٹن صفدر کے خلاف نیب ریفرنسز کی سماعت ٗ مزید دو گواہوں پر جرح مکمل ہوگئی ٗمزید تین گواہ طلب

عمران خان نے کہا کہ ان لوگوں نے اپنی چوری بچانے کیلئے وہ کام کیا جو دشمن بھی نہیں کرتا، انہوں نے کہا کہ ممبئی حملے فوج نے کرائے، ساری دنیا میں اس سے فوج کی بے عزتی ہوئی، آج ایف اے ٹی ایف نے پاکستان کو گرے لسٹ میں ڈال دیا، انہوں نے اپنی چوری بچانے کیلئے ملک کا نقصان کرایا اور ہر سطح پر گئے، نوازشریف نے ثابت کیا کہ پیسہ بچانے کیلئے وہ کچھ بھی کرسکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ آج جو فیصلہ ہوا اس پر خاص طور پر اللہ کا شکر ادا کروں گا، انسان صرف کوشش کرتا ہے، 22 سے کوشش کررہا تھا ٗکامیابی اللہ دیتا ہے۔

عمران خان نے کہا کہ ان لوگوں کو صرف یہ جواب دینا تھا کہ پیسہ کہاں سے آیا اور ملک سے باہر کیسے گیا، میں تو ایک کرکٹر تھا کوئی وزیر یا وزیراعظم نہیں تھا، 34 سال پہلے فلیٹ لیا، اگر میں دستاویزات دے سکتا ہوں تو ملک کا وزیراعظم نہیں بتاسکتا کہ اربوں کی جائیداد کیسے آئی اور کیسے باہر گئی۔انہوں نے کہا کہ خیبرپختونخوا میں یہ ہماری پہلی باری تھی جس سے بہت کچھ سیکھا، اب اللہ نے موقع دیا تو عوام سے وعدہ کرتا ہوں ہمیشہ سچ بولوں گا اور پروپیگنڈا نہیں کروں گا، جیسا مہاتیر محمد نے احتساب کیا ایسا احتساب کروں گا، سب الیکشن لرنے سے لڑیں گے۔

اس سے قبل لوئر دیر تیمر گرہ میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ پاکستان کا سب سے بڑا مسئلہ کرپشن تھا اور ہے، سارا پاکستان فیصلے کا انتظار کر رہا ہے، آج پاکستان کی تاریخ کیلئے فیصلہ کیوں ضروری ہے، کیونکہ اب تک طاقتور آتا تھا ٗ پیسے لوٹتا تھا اور کوئی ادارہ کچھ نہیں کہتا تھا، نیب ایف آئی اے سمیت پولیس میں بھی چوروں کو پکڑنے کی جرات نہیں تھی۔انہوں نے کہاکہ عوام کا پیسا چوری کرکے منی لانڈرنگ سے باہر بھیجا جاتا ہے، کرپشن کے مافیا کے خلاف 22 سال پہلے جنگ شروع کی تھی۔

مزید پڑھیں۔  سپریم کورٹ نے کراچی سے تمام آئل ٹینکرز شہر سے باہر ذوالفقار آباد منتقل کرنے کیلئے 1 دن کی مہلت دیدی

چیئرمین پی ٹی آئی نے کہاکہ چھ بار شریف خاندان نے پنجاب میں حکومت کی، قوم کا سب سے بڑا ڈرامے باز شہبازشریف ہے، اب وہ انسانوں پر سرمایہ کرنے کی باتیں کرتا ہے، شہباز شریف کوئی بات تو اپنی عقل سے کرو، جو میں بولتا ہوں، وہ شہبازشریف بولنا شروع ہوجاتے ہیں۔عمران خان نے کہا کہ جو بھی اقتدار میں آتا ہے فضل الرحمان مقناطیس کی طرح جڑ جاتے ہیں ٗیہ پہلی باری ہوگی اگر ہماری حکومت آئی تو یہ مقناطیس نہیں جڑیگا۔انہوں نے اپنی سابق صوبائی حکومت کی اتحادی جماعت اسلامی پر بھی تنقید کی اور کہا کہ آپ کو فضل الرحمان کے علاوہ اتحاد کرنے کیلئے کوئی نہیں ملا؟ جب آپ سے پوچھا جائے گا کہ بطور چیئرمین کشمیر کمیٹی فضل الرحمان نے کشمیریوں کیلئے کیا کیا؟ تو آپ کیا کہیں گے۔

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں