عورتوں اور مردوں کے مشترکہ کھانے پر پابندی

عورتوں

جکارتہ: اسلامی قوانین کے تحت جزیرے سماٹرا کے ضلع بیرون میں عورتیں اور مرد کسی ریستوران یا کافی شاپ میں مشترکہ ٹیبل حاصل نہیں کر سکیں گے،

چاہے وہ میاں بیوی یا کو ئی اور قریبی رشتہ دار ہی کیوں نہ ہوں۔میڈیارپورٹس کے مطابق انڈونیشیا کے ایک اسلامی صوبے ایچے کے ایک ضلع میں ہوٹل میں عورتوں اور مردوں کے ایک ساتھ کھانے پر پابندی لگا دی ہے۔ ایک سرکاری بیان میں کہا گیا کہ اس کا مقصد عورتوں سے زیادہ اچھا برتاؤ کرنا ہے۔

ایچے دنیا کا وہ واحد گنجان آباد مسلم اکثریتی علاقہ ہے جہاں سخت اسلامی قوانین نافذ ہیں اور خواتین پر لگائی جانے والی پابندیوں کے خلاف آوازیں اٹھائی جاتی رہی ہیں۔انڈونیشی صوبے ایچے میں، جوئے، شراب نوشی اور اخلاقی جرائم پر کوڑوں کی سزائیں دی جاتی ہیں۔ حکم نامے میں کام کی جگہوں پر دوپہرلنچ ٹائم میں عورتوں اور مردوں پر یہ پابندی لگا دی گئی ہے کہ وہ نہ تو مل بیٹھ کر لنچ کر سکتے ہیں اور نہ ہی کھانا آپس میں بانٹ سکتے ہیں۔

Comments

comments

مزید پڑھیں۔  ٹرمپ صدارت کا ایک سال مکمل ہونے پر شہروں میں لاکھوں خواتین کا احتجاج

اپنا تبصرہ بھیجیں