آدھا شوارمہ اور سارے بیمار… زونیرہ شبیر

آدھا شوارمہ اور سارے بیمار

کہتے ہیں بڑی عید مطلب عیدالضحی کے بعد لوگ بیمار ہو جاتے ہیں اور پھر یہ بھی کہا جاتا ہے کہ اس بیماری کی بڑی وجہ قربانی کا گوشت ہوتی ہے ۔
اصل میں اس بیماری کی بڑی وجہ قربانی کا گوشت نہیں ہوتی بلکہ قربانی کا گوشت ضرورت سے ذیادہ کھانے کی وجہ سے ہوتی ہے ۔
لیکن یہاں تو معاملات ہی کچھ اور ہیں عید سے دو دن پہلے ہی طبیعت خراب ۔ اور وہ بھی گھر میں موجود سبھی افراد کی ۔
صبح آنکھ کھلتے ہی شدید پیٹ درد محسوس ہوا ۔ ماما کو آواز دی ” ماما جی پیٹ درد کر رہا ہے ” ماما نے کالی پتی پودینا اور تھوڑا نمک مکس کر کے دیا میں نے پانی کے ساتھ وہ لیا پھر ماما نے کہا جاو پاپا سے بولو کوئی میڈیسن دے دیں ۔ اب جب کہ میں پاپا کے پاس گئی تو کیا دیکھا کہ پاپا کا تو میرے سے برا حال ہے وامٹنگ بھی پیٹ درد پیٹ خراب ۔ اپنی بھول گئی پاپا کی فکر زیادہ پڑ گئی ۔ چند لمحے ہی گزرے تھے کہ پتہ چلا آنٹی بھی بیمار ہیں انکی بھی یہی حالت ہوئی ہے ۔

مجھے تو آنکھ کھلتے ہی شک پڑ گیا تھا کہ یہ شائد رات کو کھائے اس آدھے امرود کا کمال ہے ۔ اب تو پکا یقین ہو گیا کہ ہو نا ہو یہ امرود میں ہی کوئی سنڈی ونڈی بھی کھائی گئی ہے ۔ کیونکہ امرود گھر میں ہم تینوں نے ہی کھائے تھے ۔

گھر کے پاس والے ڈاکٹر انکل کو بلایا میڈیسن لی لیکن بھئی آرام نا ہی آنا تھا نا ہی وہ آیا ۔
لو جی ابھی چند گھنٹے ہی گزرے تھے کہ ماما دادو اور چھوٹے بھائی کی بھی یہی حالت ۔ اب گھر میں موجود سبھی لوگ بیمار ۔ سبھی کو بخار وامٹنگ پیٹ خراب ۔ اب حالت کچھ یوں تھی کہ ہر بندہ اپنے اپنے بستر پر لیٹا دکھائی دیتا تھا ۔ نا کسی کو کھانے کا ہوش نا ہی پینے کا ۔ آنکھ تھی کہ بس کھلنے کا نام ہی نہیں لے رہی تھی ۔ سو سو کے مگر نیند تھی کہ جانے کا نام ہی نہیں لے رہی تھی ۔ تبھی چاچو لوگ آ گئے مجھے بھی شائد آواز دی مگر میں تو ایسے سوئی تھی جیسے صدیوں بعد سوئی ہوں یا پھر نشہ کر کے سوئی ہوں ۔ تبھی میرے کمرے میں حنین آئی اس نے آواز لگائی آپی میں آپ کے گھر آ گئی ہوں ۔ تب کہیں جا کے تھوڑی آنکھیں کھلیں ۔

مزید پڑھیں۔  کیا آپ جانتے ہیں شطرنج کا آغاز ایک چاول کے دانے سے کیسے ہوا؟

اب تو ایک پریشانی یہ بھی تھی کہ آخر یہ وجہ ہے کیا کہ گھر کا ہر بندہ ہی بیمار ہو گیا ہے ۔
خیر جیسے جیسے وقت گزرتا گیا طبیعت خراب سے خراب تر ہوتی جا رہی تھی دن رات یونہی گزر گئے اگلے دن بھی یہی حالت ۔

اب جو ہوسپٹل گئے تو یہ کیا ۔۔ یہ تو ایسا لگتا تھا جیسے پورے کا پورا شہر یہیں آیا ہے ۔ پولیس بھی کافی آئی تھی ۔ سب لوگوں کو ڈرپیں لگی تھیں تب ہی میرے گھر والوں کو بھی ایک ایک بیڈ دیا گیا ۔۔ جی جی آپ باکل ٹھیک سمجھے ان سب کو بھی ڈرپ ہی لگنے والی تھیں ۔ تبھی کچھ دیر میں ڈاکٹر انکل آئے انہوں نے پوچھا ایسا کیا کھایا آپ نے پاپا نے کہا ایسا کچھ خاص تو نہیں کھایا لیکن ہم سمجھ رہے تھے امرود کی وجہ سے ہے لیکن وہ تو گھر کے سبھی لوگوں نے نہیں کھائے ڈاکٹر انکل ہنس پڑے اور سوال کیا کہ شوارمہ کھایا ؟
پاپا نے بتایا جی اس دن کھایا تھا ۔ کہنے لگے یہ اسی کا کمال ہے ۔ یہ جو یہاں 70 بندے ایڈمٹ ہیں وہی شوارمہ کھا کر آئے ہیں ۔
اس کے ساتھ ہی انہوں نے ٹی وی آن کیا جہاں خبر چل رہی تھی

” شوامہ کھانے سے 70 سے زائد لوگ ہسپتال میں “

اووو تو اب میں سمجھی یہ کمال کسی سنڈی کا نہیں بلکہ فوڈ پوئزن کا تھا ۔
میں سب کو دیکھ رہی تھی کوئی درد سے کراہ رہا ہے تو کوئی آہیں بھر رہا ہے سب نڈہال پڑے تھے ۔
اب سمجھ لگی کہ امرود میں موجود کوئی سنڈی نہیں کھائی گئی تھی بلکہ یہ اس آدھی شوارمے کا کمال تھا جو اس رات پاپا کام سے لوٹتے ہوئے سب کے لیئے لائے تھے اور جو ہم سبھی لوگوں نے بڑے مزے لے کے کھائے تھے ۔ پتہ نہیں یہ واقعی فوڈ پوئزن سے ہی تھا یا پھر کچھ اور آئیٹم موجود تھا اس میں ۔ یا پھر ہمارے کھانے سے پہلے اس شوارمے کا مسالہ کوئی سانپ شانپ یا بچھو ٹیسٹ کر چکے تھے ۔خیر وہ سب تو اللہ ہی جانے
سننے میں آیا کہ پولیس نے چھاپہ بھی مارا لیکن شوارمے والے چاچا جی فرار ہو گئے تھے ۔

مزید پڑھیں۔  ’طیفا ان ٹربل‘ نے ریلیز کے دوسرے روزہی کمائی کا ریکارڈ بنالیا

کچھ دیر بعد سبھی لوگوں کے ٹیسٹ کرائے گئے تاکہ پتہ تو چلے آخر مین مسئلہ ہے کیا ۔ ٹیسٹ وغیرہ کرانے سے پتہ چلا کہ اس شوارمے کے مسالے کو نا تو کسی سانپ نے چکھا اور نا ہی کسی بچھو نے ہاتھ لگایا بلکہ چھپکلی وہ سارے کا سارا مسالہ کھانے کے چکر میں تھی مطلب کے مسالے والے برتن میں کھا پی کر سکون کی نیند سو رہی تھی ۔ اب ذرا اپنے بارے میں بتا دوں کہ یہ جاننے کے بعد میرا کیا حال ہوا تو مجھے جو پہلے وامٹنگ نہیں ہو رہی تھی یہ سن کے ہو گئی کہ میں چھپکلی والا شوارمہ کھا گئی ۔۔۔ اخ تھو
کہنے کا مقصد صرف یہ ہے اور آپ سبھی سے گزارش بھی ہے کہ بازار کے کھانے ضرورت سے ذیادہ استعمال مت کریں گھر کے صاف ستھرے کھانے ہی کھائیں ۔ آج کل موسم بھی خراب ہے تو پھل سبزیاں دھو کر اور روشنی میں استعمال کریں ۔ برتنوں کو اچھی طرح دھو کر استعمال کریں ۔ جب بھی پانی پیئیں گلاس کنگھال کر اور دیکھ کر پانی پیئیں ۔ یہ سنت رسول بھی ہے کہ پانی کو دیکھ کر مسکرا کر اور تین سانسوں میں پیئیں ۔ رسول اللہ نے جو طریقے ہمیں بتائے ہیں اگر ہم ان پر عمل کریں ان کے مطابق کام کریں گے تو ہمیں کبھی کسی مشکل پریشانی اور بیماری کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا ۔
لگتا ہے ڈاکٹر انکل اب میرے پاس آنے والے ہیں تو آپ ذرا میری باتوں پہ عمل کرنے کی کوشش کریئے گا ۔ اب میں زرا ڈاکٹر انکل سے مل لوں آپ سے بعد میں بات کرتی ہوں ۔

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں