ملک کا معاشی لحاظ سے دیوالیہ ہو جائیگا اگر قرضوں پر پابندی نہ لگائی، خواجہ حبیب الرحمان

ملکی معیشت

ٹیکس ایمنسٹی سکیم آئین سے متصادم اور حکمرانوں کی کرپشن کو چھاپنے کا ذریعہ ہے‘ صدر ایران پاک فیڈریشن

لاہور:ایران پاک فیڈریشن آف کلچر اینڈ ٹریڈ کے صدرخواجہ حبیب الرحمان کا کہناہے کہ ساڑھے چار سال میں قرضوں میں12 ہزار 500 ارب کے اضافے نے ملکی معیشت کو تباہ کردیا ہے ،قرضوں پر پابندی نہ لگائی گئی تو ملک معاشی لحاظ سے دیوالیہ ہو جائیگا، حالات کو بہتر کر نے کیلئے بے رحم فیصلے کر نا ہوں گے ۔قرضے ملکی معیشت میں دوہرے بوجھ کے مترادف ہیں، ادائیگی کے بغیر ملکی معیشت مستحکم نہیں ہو سکتی

انہوں نےایک بیان میں کہا کہ قرضوں کو حقیقی ترقی قرار نہیں دیا جاسکتا، حقیقی ترقی وہی ہوتی ہے جو اپنے پیسوں اور بچتوں سے کی جائے، قرضے ملکی معیشت میں دوہرے بوجھ کے مترادف ہیں،ضرورت اس امر کی ہے کہ آہستہ آہستہ واجب الادا قرضوں کی ادائیگی کا بندوبست کیا جائے تاکہ ملکی معیشت کو استحکام مل سکے۔

انکا کہنا تھا کہ ایمنسٹی سکیم ٹیکس دینے والوں کے منہ پر طمانچہ ہے، ماہ قبل حکومت ختم ہونے سے پہلے معاشی شب خون مارا گیا، ایمنسٹی سکیم لانے کا مقصد صرف کالے دھن کو سفید کرنا ہے،منی لانڈرنگ اور کرپشن والا اپنے ذاتی اکاونٹ سے کچھ نہیں کرتا۔ غریب آدمی کو فائدہ پہنچانے کے لیے کبھی کوئی ایسی سکیم نہیں آتی، وزیراعظم نے گزشتہ دو نوں خود کہا آف شور کمپنی بنانا جرم نہیں، وزیر اعظم نے آدھا سچ بولا لیکن چھپ کر آف شور کمپنی نہیں بنائی جا سکتی۔

انہوں نے مزید کہا کہ قوم کے ساتھ اس سے بڑھ کر بھی کوئی حکومتی مذاق ہو سکتا کہ حکمران گورننس کو قومی خزانے کی مکمل دیدہ دلیری سے لوٹ مار کا ذریعہ بنا لیں، قومی معیشت عالمی مالیاتی اداروں کے تباہ کن قرضوں اور نوٹ چھپائی پر چلائی جائے،ٹیکس ایمنسٹی ، ٹیکس چوری اور اسٹیٹس کو کے حکمرانوں کی مچائی بے پناہ کرپشن کے لئے ڈھال کا ذریعہ ہی نہیں ہے یہ سرکاری بلیک میلنگ اور نا اہل حکمرانی کی بھی انتہائی شکل ہے۔

مزید پڑھیں۔  فنڈنگ کا سلسلہ نہ رْکا تو پانچ سال میں ڈیم بنادیں گے۔وزیراعظم عمران خان

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں