‘روسی گیم’ نے 21 سالہ لڑکی کی جان لے لی

loading...

مدھیہ پردیش کے ضلع گوالور میں لڑکی نے آن لائن، دوستوں کے ساتھ کھیلتے ہوئے خود کو اپنے والد کے ریوالر سے گولی مار لی۔

پولیس کے مطابق لڑکی دہلی میں مقیم اپنے دوست کے ساتھ واٹس اپ لائیو چیٹ پر مذکورہ خطرناک گیم کھیل رہی تھی۔

پولیس افسر نے واقع کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ لڑکی نے والد کے ریوالر میں ایک گولی ڈالی، اس کے سیلنڈر کو گھمایا، اسے اپنے سر پر رکھا اور ٹریگر دبا دیا۔

انہوں نے بتایا کہ لڑکی کی شناخت 21 سالہ کرشمہ یادیو کے نام سے ہوئی جو گوالور میں نارائن ویہار کالونی کی رہائشی تھی، لڑکی کے والد کا کہنا تھا کہ وہ 4 ماہ قبل ہی بھارتی فوج سے صوبیدار کی حیثیت سے ریٹائر ہوئے تھے جبکہ وہ واقع کے وقت گھر میں موجود نہیں تھے۔

رپورٹ کے مطابق جس وقت واقع پیش آیا تو لڑکی کا بڑا بھائی مارکیٹ میں تھا۔ پولیس افسر نے مزید بتایا کہ پستول کے چیمبر میں صرف ایک ہی گولی ڈالی گئی تھی اور لڑکی نے یہ کہہ کر گولی چلادی کہ ‘اب میں قسمت آزماتی ہوں’۔

انہوں نے بتایا کہ جب لڑکی کا بھائی گھر پہنچا تو اس نے اپنی بہن کو فرش پر خون میں لت پت پایا، جس پر اسے ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں ڈاکٹرز نے اسے 72 گھنٹے کے بعد مردہ قرار دے دیا۔

تفتیشی افسر کا کہنا تھا کہ جب لڑکی کے دوست سے بات کی گئی تو اس کا کہنا تھا کہ ان دونوں کے درمیان ویڈیو کال پر بات چل رہی تھی کہ لڑکی نے اچانک پستول نکال لیا جس کے بعد ویڈیو کال منقطع ہوگئی۔

مزید پڑھیں۔  ہم سستے جوتے، کپڑے اور کھلونے فراہم کرنے والی شبیہ تبدیل کرنا چاہتے ہیں،چین کا موقف

خیال رہے کہ روسی گیم ‘رشین رولیٹ ‘ میں کھلاڑی ریوالر میں ایک گولی ڈالتا ہے اور اس کے سیلنڈر کو گھماتا ہے جس کے بعد وہ اپنی قسمت آزمانے کے لیے اسے اپنے سر پر رکھ کر گولی چلا دیتا ہے۔

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں