برطانوی وزیراعظم کا ترک صدرکو فون

برطانیہ

لندن: ٹریزا مے کے دفترنے بتایاہے کہ برطانیہ تْرکی کی معیشت کو ترقّی پاتا دیکھنا چاہتا ہے اور وہ ترکی کے وزیر مالیات کا خیرمقدم کرے گا۔

میڈیارپورٹس کے مطابق یہ بات ٹریزا مے کی ترکی کے صدر رجب طیب ایردوآن سے ٹیلیفون پر بات چیت کے بعد جاری بیان میں بتائی گئی۔بیان کے مطابق دونوں سربراہان نے شام کے شمال مغرب میں بشار حکومت کی جانب سے عسکری کارروائی میں اضافے اور ایک بار پھر کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کے امکان پر اپنے اندیشوں کا اظہار کیا۔

loading...

اس وقت تمام تر نظریں شام کے شمال مغرب میں ترکی کی سرحد کے ساتھ واقع صوبے اِدلب پر مرکوز ہیں جہاں شامی حکومت کی فوج مسلح گروپوں اور تحریک الشام (سابقہ النصرہ محاذ) کے آخری گڑھ پر بڑے حملے کے لیے عسکری تیاریاں کر رہی ہے۔واضح رہے کہ یہ صوبہ شام میں اْن “سیف زونز” کا بھی حصّہ ہے جن کا قیام آستانہ میں روس، ترکی اور ایران کے زیر سرپرستی مذاکرات کے اختتام پر عمل میں لایا گیا تھا۔

Comments

comments

مزید پڑھیں۔  روپے کی قدر میں بہتری سے پاکستان پر غیرملکی قرض میں 300 ارب روپے کی کمی

اپنا تبصرہ بھیجیں