سابق ہاکی اولمپیئن منصور احمد کا پاکستان میں دل کا آپریشن کرانے سے انکار

mansoor -ahmad-aajkal

منصور احمد کے مطابق پاکستان میں دل کی تبدیلی کے علاج میں 6 مہینے سے ایک سال کا عرصہ لگے گالہذا وہ دل کا آپریشن بھارت میں کرانا چاہتے ہیں

میڈیا رپورٹ کے مطابق گذشتہ ہفتے منصور احمد نے دل کے ٹرانسپلانٹ کیلئے بھارت سے علاج میں مدد کی اپیل کی تھی۔ انہوں نے کہاکہ میں نے 1989 میں اندرا گاندھی کپ اور دیگر مقابلوں میں انڈیا کو میدان میں ہرا کر بہت سے بھارتی شائقین کے دل توڑے ہوں گے تاہم اب مجھے ہارٹ ٹرانسپلانٹ کی ضرورت ہے جس کیلئے مجھے بھارتی حکومت کی مدد درکار ہے جس کے بعد منصور احمد کو پاکستان میں نئی تکنیک ایل وی اے ڈی کے ذریعے مکینیکل ڈیوائس لگوانے کی پیشکش کی گئی اور رپورٹس کے مطابق قومی ادارہ برائے امراض قلب کے سربراہ پروفیسر ندیم قمر نے اس ڈیوائس کے لیے امریکی فرم کو آرڈر بھی دیدیا۔ اس منفرد اور جدید ٹیکنالوجی کے ذریعے ان مریضوں کو مکینیکل ڈیوائس لگائی جاتی ہے جن کے دل کے دائیں یا بائیں پٹھے ناکارہ ہوگئے ہوں

loading...

اس طریقہ علاج سے پہلا آپریشن رواں برس جون میں منصور احمد کا کرنے کا فیصلہ کیا گیا تاہم سابق گول کیپر نے پاکستان میں دل کا آپریشن کروانے سے انکار کردیا۔منصور احمد کے مطابق پاکستان میں دل کی تبدیلی کے علاج میں 6 مہینے سے ایک سال کا عرصہ لگے گالہذا وہ دل کا آپریشن بھارت میں کرانا چاہتے ہیں۔سابق اولمپیئن نے کہا کہ کئی ممالک میں دل کی پیوندکاری ہوتی ہے تاہم بھارتی شہر چنائے میں علاج کی بہتر سہولیات دستیاب ہیں۔ واضح رہے کہ منصور احمد پاکستان کے لیے 338 انٹرنیشنل ہاکی میچز کھیل چکے ہیں

مزید پڑھیں۔  ملک بھر میں شبِ معراج انتہائی عقیدت و احترام سے منایا جارہا ہے

 انہوں نے 1986 سے 2000 کے دوران اپنے کیریئر میں 3 اولمپکس اور کئی ہائی پروفائل ایونٹس میں پاکستان کی نمائندگی کی۔منصور احمد ہی وہ کھلاڑی ہیں، جنہوں نے 24 سال قبل پاکستان کو چوتھی مرتبہ ہاکی کا عالمی چمپئن بنایا تھا

Spread the love

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں