بچے پیدا کروانے والی فیکڑی کا شرمناک دھندا بے نقاب ….

آپ نے کپڑوں، جوتوں، کاروں اور بہت سی ایسی مادی اشیاء بنانے کی فیکٹریوں کے متعلق ہی سنا ہوگا لیکن آپ یہ سن کر حیران رہ جائیں گے کہ افریقہ کے ایک ملک نائیجیریا میں زندہ انسان پیدا کرنے کی فیکڑی پکڑی گئی ہے۔

تفصیلات سے پتہ چلا گیا ہے کہ یہ فیکڑی نائیجیریا کے شہر لیگوس میں واقع ہے. لڑکیوں کو اغواء کرکے اس فیکٹری میں لایا جاتا تھا اور پھر ان لڑکیوں کے ساتھ جنسی زیادتی بھی کی جاتی تھی. جب تک لڑکیاں حاملہ نہیں ہو جاتیں ان کے ساتھ جنسی زیادتی کی جاتی ہے اور پھر ان لڑکیوں کا پیدا ہونے والا بچہ فروخت کر دیا جاتا ہے۔

Photo: File

اغواء کی جانے والی لڑکیوں کو ایک ساتھ نہیں رکھا جاتا بلکہ ان کو الگ الگ جگہ پر قید کیا جاتا ہے. پولیس نے تفتیش کرکے ان تمام جگہوں کا پتہ چلایا اور پھر ان عمارتوں میں چھاپے مارے جہاں ان لڑکیوں کو رکھا گیا تھا۔ پولیس نے چھاپوں میں ان عمارتوں سے 29 لڑکیوں کو بازیاب کروایا ان میں سے کچھ لڑکیاں حاملہ بھی تھیں۔

Photo: File

ان کے ساتھ چار بچے بھی تھے۔ چھاپے کے دوران اس ’بچہ فیکٹری‘ میں کام کرنے والی دو نرسوں کو بھی گرفتار کر لیا گیا۔ پولیس افسران نے بتایا کہ اس فیکٹری میں پیدا ہونے والا ہر بچہ 1000پاﺅنڈ (تقریباً 1لاکھ 93ہزار روپے) اور ہر بچی 700پاﺅنڈ (تقریباً 1لاکھ 35ہزار روپے) میں فروخت کی جاتی تھی۔

پولیس کے مطابق یہ فیکٹری ایک خاتون چلا رہی تھی اس خاتون کا نام میڈم اولوشی ہے. یہ خاتون خود بھی پانچ بچوں کی ماں ہے۔ پولیس فیکٹری کی مالک خاتوں کو گرفتار نہیں کرسکی. یہ خاتون اب تک فرار ہے.

Photo: File

لیکن پولیس اس خاتون کو گرفتار کرنے کے لیے چھاپے مارے رہی ہے۔ اس فیکٹری میں لائی جانے والی زیادہ تر خواتین غریب خاندانوں سے ہیں اور یہ گروہ انہیں گھروں میں ملازمت دلانے کا جھانسہ دے کر لاتا اور ان عمارات میں قید کر لیتا تھا۔

Leave a Reply