دفتر خارجہ نے 6 پاکستانیوں کی شہادت کی تصدیق کر دی

دفتر خارجہ

اسلام آباد: نیوزی لینڈ حکام نے گزشتہ روز مسجد پر ہونے والے دہشت گرد حملے میں 6 پاکستانیوں کے شہید ہونے کی تصدیق کر دی ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر فیصل کے مطابق شہید پاکستانیوں میں سہیل شاہد، سید جہانداد علی، سید اریب احمد، محبوب ہارون، نعیم راشد اور ان کے بیٹے طلحہ نعیم شہید شامل ہیں۔

ڈاکٹر فیصل کے مطابق شہید پاکستانیوں کے ناموں کا اعلان نیوزی لینڈ حکام نے کیا جب کہ مزید 3 پاکستانی بھی لاپتہ ہیں جن کی شناخت کی کوشش جاری ہے۔

یاد رہے کہ نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی دو مساجد پر آسٹریلوی دہشت گرد برینٹن ٹیرینٹ نےحملہ کیا تھا جس میں اب تک 50 افراد جاں بحق اور کئی زخمی ہیں۔

-قبل ازیں ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر فیصل کی جانب سے 9 پاکستانیوں کی فہرست جاری کی گئی

ڈاکٹر فیصل کا کہنا تھا کہ نیوزی لینڈ میں پاکستانی ہائی کمیشن اس حوالے سے مزید تفصیلات اکٹھی کررہا ہے۔

loading...

90 ہزارڈالر میں ایک اور مارخور کا شکار!

ترجمان دفترخارجہ نے کہا ہے کہ سانحہ کرائسٹ چرچ میں شہید و زخمی ہونے والے افراد کے اہلخانہ وزٹ ویزہ کیلئے درخواست دے سکتے ہیں۔

ڈاکٹر محمد فیصل نے نیوزی لینڈ میں پاکستان کے اعزازی قونصل جنرل کا رابطہ نمبر جاری کرتے ہوئے کہا کہ متاثرین درخواست نمبر و پاسپورٹ کی اسکین کاپی اعزاری قونصل جنرل معین فُودا کو ای میل یا واٹس ایپ کرسکتے ہیں۔

گزشتہ روز حملے میں شہید ہونے والے ہیرو پروفیسر نعیم راشد اور ان کے بیٹے طلحہ نعیم کی تدفین کرائسٹ چرچ میں ہی کی جائے گی۔

ترجمان دفترخارجہ کے مطابق شہید نعیم راشد اور ان کے بیٹے کی تدفین کے انتظامات کیے جارہے ہیں جس میں مسلمان اور پاکستانی ایسوسی ایشن معاونت کررہے ہیں جب کہ پاکستانی مشن 4 شہیدوں کی میتوں کی پاکستان منتقلی کیلئے اہل خانہ سے تعاون کررہا ہے۔

3 لاپتہ پاکستانیوں کی شاخت کیلئے ڈی این اے کیا جائے گا، وزیرخارجہ

جیو نیوز سے گفتگو میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ سانحہ کرائسٹ چرچ میں شہید 6 پاکستانیوں کی تصدیق ہوگئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ چار شہداء کے خاندانوں نے میتیں پاکستان لانے کی خواہش ظاہر کی ہے جب کہ دو شہداء کے لواحقین نیوزی لینڈ میں ہی تدفین چاہتے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ چار شہداء کی میتیں پاکستان لانے کے انتظامات میں بھرپور تعاون کریں گے۔

وزیرخارجہ کے مطابق کرائسٹ چرچ کے اسپتال میں زیرعلاج ایک پاکستانی کی حالت تشویشناک ہے جب کہ 3 لاپتہ پاکستانیوں کی شاخت کیلئے ڈی این اے کیا جائے گا۔

(Visited 21 times, 1 visits today)

Comments

comments

دفتر خارجہ,

اپنا تبصرہ بھیجیں