سورہ الرحمٰن سے ایڈز کا علاج…

سورہ الرحمٰن سے ایڈز کا علاج

آج میں آپ کو  بتاوں گی کے کس طرح سورہ الرحمٰن سے ہر بیماری کا علاج ممکن ہے۔ ایڈز کا بھی. اور یہ بہترین علاج کس نے بتایا اور وہ کون ہیں ۔

ڈاکٹر محمد جاوید

ڈاکٹر محمد جاوید سروسز اسپتال میں ایک ڈاکٹر ہیں جو آئی سی یو میں جاب کرتے ہیں ۔ وہ تقریبًا بیس سال سے سورة رحمن کے ذریعے سے مریضوں کا علاج کرتے ہیں اور مریض فوراً شفا پا جاتے ہیں ۔ کسی بھی طرح کی بیماری ہو ڈاکٹر محمد جاوید سورة رحمن سے مریض کو ایک دم ٹھیک کر دیتے ہیں ۔
ڈاکٹر صاحب کا کہنا ہے کہ اس کے لیئے ہم سب سے پہلے مریض کو کہتے ہیں وہ اپنا دل بالکل صاف کر لے اور اپنے اللہ تبارک تعالی سے اپنی گزشتہ تمام غلطیوں کی معافی مانگے ۔

ایڈز

ڈاکٹر صاحب کا کہنا ہے کہ میڈیکل علاج کے ساتھ ساتھ ہم مریض کو سورہ الرحمٰن کی تلاوت سننے کا کہتے ہیں ۔ پھر اگر اس میں مریض کی مرضی شامل ہو تو ہم اسے سورہ الرحمٰن کی تلاوت سناتے ہیں ۔

ڈاکٹر صاحب  مزید کہتے ہیں کہ مریض اگر بے ہوش ہے تو وہ ویسے ہی سن رہا ہوتا ہے لیکن اگر مریض ہوش میں ہے تو ہم اس سے درخواست کرتے ہیں کہ وہ تلاوت سنے ۔

طریقہ علاج

ڈاکٹر صاحب کہتے ہیں کہ اب جب مریض ہماری بات پر راضی ہوتا ہے تو ہم اسے سورة رحمن کی تلاوت سناتے ہیں ۔ مریض کو سورة رحمن کی تلاوت قاری باسط کی آواز میں سنائی جاتی ہے ۔ وہ تلاوت سنائی جاتی ہے جو قاری ٹھہر ٹھہر کر کرتا ہے ۔

تلاوت سننے کے اوقات

ویسے تو تلاوت کسی بھی وقت سنی جا سکتی ہے کسی بھی وقت کی جا سکتی ہے لیکن یہاں چونکہ بات علاج کی ہے تو اس کے لیئے یہ جاننا ضروری ہے کہ تلاوت سننے کے اوقات کون سے ہونے چاہیئیں ۔ تو اب سوال پیدا ہوتا ہے کہ مریض کے لیئے تلاوت کتنی بار سننا ضروری ہے اور کن اوقات میں سننا ضروری ہے ۔ تو اس بارے میں ڈاکٹر صاحب کا کہنا ہے کہ تلاوت دن میں تین مرتبہ مریض کو سنائی جائے صبح ، دوپہر اور شام ۔ بالکل اسی طرح جس طرح مریض کو تین وقت دوائی دی جاتی ہے ۔ دوائی بھی کسی مریض کو تین اوقات میں صبح دوپہر شام دی جاتی ہے ۔ اور تلاوت سنتے وقت یہ ضروری ہے کہ مریض کی آنکھیں بند ہوں اور اسکا پورا دھیان صرف اور صرف تلاوت پر ہو ۔

تلاوت کتنے دن سنی جائے ؟

ہمیں یہ تو پتہ چل گیا کہ مریض دن میں تین مرتبہ سورة رحمن کی تلاوت سنے گا ، صبح دوپہر اور شام لیکن اب سوال پیدا ہوتا ہے کہ اور یہ سوال بھی انتہائی اہمیت کا حامل ہے کہ مریض کتنے دن کتنے مہینے یا پھر سال تک سنے گا ؟ تو اس بارے میں ڈاکٹر جاوید ہمیں بتاتے ہیں کہ 7 دن تک صبح دوپہر شام سورة رحمن کی تلاوت سننا ضروری ہے ۔

مریض کے لیے تلاوت کہاں سننا ضروری ہے ؟

جس طرح اوپر بات کی گئی کہ تلاوت کسی بھی وقت سنی اور کی جا سکتی ہے اسی طرح تلاوت کسی بھی جگہ کی جا سکتی ہے اور سنی جا سکتی ہے بشرطیکہ جگہ پاک صاف ہو ۔ لیکن یہاں بات چونکہ مریض کے علاج کی ہے اس لیئے جگہ کا معلوم ہونا ضروری ہے تو اب یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ کیا کوئی جگہ مخصوص ہے تلاوت سننے کے لیئے یا پھر کسی بھی جگہ تلاوت سنی جا سکتی ہے ؟
اس بارے میں ڈاکٹر محمد جاوید کا کہنا ہے کہ تلاوت کہیں بھی سنی جا سکتی ہے کسی مخصوص جگہ کی کوئی قید نہیں ہے ۔ آپ تلاوت سن سکتے ہیں خواہ آپ گھر میں ہیں ، آئی سی یو میں ہیں یا پھر کسی واڈ میں ۔

آب زم زم ایک معجزہ

سورة رحمن اے علاج کیسے دریافت ہوا ؟

ڈاکٹر صاحب سے جب پوچھا گیا کہ انہوں نے یہ علاج کیسے دریافت کیا تو ڈاکٹر صاحب کا کہنا تھا کہ وہ کافی عرصے تک لوگوں کو آب زم زم بھی پلاتے رہے ہیں تاکہ مریض شفا پا جائیں ۔ میں اللہ سے یہ دعا کرتا تھا کہ اللہ مجھے کوئی ایسا طریقہ بتا دے کہ جس سے لوگ شفا پا جائیں ۔ اور ڈاکٹر صاحب کہتے ہیں کہ میں نے اللہ سے وعدہ کیا کہ میں اگر وہ مجھے کوئی ایسا طریقہ بتا دیں گے تو میں اسے لوگوں میں مفت بانٹوں گا ۔

پھر ایک میں کہیں جا رہا تھا تو ایک بول ریا تھا ” قرآن شفا ہے شفا منجانب اللہ ہے ” پھر کیا ہوا کہ مجھے کہنے لگے دس سال سے دعائیں مانگ رہے ہو قرآن شفا ہے شفا منجانب اللہ ہے ۔ انہوں نے پھر مجھے ایک کارڈ دیا جس پہ لکھا تھا

” کون کہتا ہے دنیا میں کسی الجھن یا نحوست کا علاج نہیں ۔ قرآن شفا ہے شفا منجانب اللہ ہے ” پھر کافی باتیں ہوئی تو میں نے پوچھا کہ قاری باسط کی ہی آواز میں کیوں سننی ہے تو کہتے ہیں کہ مجھے اس میں شفا ملی کیونکہ اس نے عشق کے ساتھ پڑھا باقی تم کسی کی بھی آواز سن لینا ۔ تو میں نے پوچھا کہ بابا جی اسکی قیمت کیا ہے کہمے لگے اسکی قیمت یہ ہے کہ جب تم ٹھیک ہو جاو تو اسے آگے بتاتے رہنا ۔

ڈاکٹر صاحب کہتے ہیں اس طرح میں نے سورہ الرحمٰن سے ایڈز کا علاج پا لیا ۔ اور کہتے ہیں اب میں اگر پانچ دوائیاں دیتا ہوں تو چھٹا یہ علاج بتاتا ہوں کہ اس سے بہت سے لوگوں کو شفا ملی ۔

(Visited 195 times, 1 visits today)

Comments

comments

ایڈز, سورہ الرحمٰن, سورہ الرحمٰن سے ایڈز کا علاج,

اپنا تبصرہ بھیجیں