آپ ان میں سے کس فوبیا کا شکار ہیں ؟ ( پارٹ 1 )‌

 فوبیا شدید اور غیر معقول خوف کا نام ہے۔ہر انسان کو کوئی نہ کوئی ڈر ضرور ہوتا ہے۔ جیسے کسی جانور کا ڈر، لوگوں سے بات کرتے کا ڈر، اونچائی کا خوف، یا اندھیرے سے خوف۔ کسی خوف میں مبتلا انسان کو بعض اوقات کافی پریشانی کا سامنا بھی کرنا پڑتا ہے۔

کسی فوبیا کا شکار لوگ  کسی خاص ماحول، وقت یا چیز سے خوفردہ ہو جاتے ہیں۔ فوبیا میں مبتلا لوگ یہ بات بھی جانتے ہیں کہ ان کا خوف ۔بے بنیاد ہے لیکن پھر بھی وہ اس کیفیت سے نکل نہیں سکتے

   کلسٹرو فوبیا (Claustrophobia)

Photo: File

اس فوبیا میں مریض کو چھوٹی اور تنگ جگہ میں پھنس جانے کا خوف میں ہوتا ہے۔ مریض کوایسا لگتا ہے وہ اس جگہ سےوہ باہرنہیں نکل سکے گا۔ تحقیق سے ثابت ہوا ہے کہ دنیا کی 5 سے 7 فیصد آبادی اس بیماری کا شکار ہے۔

 نیکٹو فوبیا (Nyctophobia)

 اندھیرے سے تو سب کو ہی خوف محسوس ہوتا ہے۔  لیکن کچھ لوگوں کو اندھیرے میں عجیب و غریب بھیانک شکلیں نظر آتی ہیں۔ ایسے ہی اندھیرے سے خوف کو ’’ناٹکٹو فوبیا‘‘ کہتے ہیں۔

Photo: File

ژینو فوبیا (Xeno Phobia)

Photo: File

اجنبیوں سے ڈر اور خوف محسوس کرنے کا نام ’ژینو فوبیا‘ ہے۔ اس فوبیا کا شکار لوگ غیر ملکیوں اور اجنبیوں سے خوف محسوس کرتےہیں۔ یہ طبی سے زیادہ معاشرتی فوبیا ہے۔ ایسے افراد کو دوسرے ملکوں کی تہذیبوں سے بھی خوف آتا ہے۔

   ایگرو فوبیا (Agoraphobia)

اس فوبیا میں مریض کو رش والی جگہوں سے خوف محسوس ہوتا ہے ۔ اس فوبیا کے شکار افراد زیادہ چہل پہل والی جگہوں سے خوفزدہ رہتے ہیں۔

Photo: File

ان کا اصل خوف دراصل ایسی جگہوں پر پھنس جانے یا پریشانی کی صورت میں وہاں سے نکل نہ سکنے کا ہوتا ہے۔ ایسے افراد پل یا بینک کی قطار سے اجتناب برتتے نظر آتے ہیں۔ مردوں کی نسبت خواتین اس کا زیادہ شکار ہوتی ہیں۔

بچوں میں گھبراہٹ یا ’اینگزائیٹی پر کس طرح قابو پایا جا سکتا ہے؟

ٹرسکائڈ کا فوبیا (Triskaedeka Phobia)

مختلف معاشروں میں عجیب قسم کے توہمات رائج ہیں۔ جن پر لوگ اندھا یقین رکھتے ہیں۔ جیسے اگرکالی بلی کا راستہ کاٹ جانا اچھا نہیں سمجھا جاتا۔ اسی طرح اکثر تہذیبوں میں 13کا ہندسہ منحوس خیال کیا جاتا ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ اس میں ترقی پذیر یا ترقی یافتہ ممالک کی کوئی قید نہیں۔

امریکہ جیسے تعلیم یافتہ معاشرے میں بھی ایسا ہی ہے اور وہاں کثیر المنزلہ عمارتوں میں تیرھویں منزل نہیں میں تیرہ نمبر کا کمرہ نہیں ہوتا اور شہروں میں 13 نمبر کی گلی نہیں ہوتی. دنیا کے کئی حصوں میں13 کے ہندسے کو مبارک بھی سمجھا جاتا ہے۔ جیسے ہانگ کانگ اور مکاؤ میں تیرہ مبارک ہندسہ ہے۔

ایماتھو فوبیا (Amathophobia)

گردوغبار سے خوف محسوس کرنے کو ’’ایماتھوفوبیا‘‘ کہتے ہیں۔ جب کبھی گرد کا طوفان یا آندھی آئے تو ایسے لوگ گھروں کے اندر گھس کر بیٹھ جاتے ہیں اور اگر گھر سے باہر ہوں تو اپنی گاڑیوں یا دیگر مقامات پر چھپ جاتے ہیں۔

Photo: File

اس فوبیا میں مبتلا افراد بہت زیادہ صفائی پسند ہوتے ہیں اور اپنے اردگرد مٹی یا گرد کا ایک ذرہ بھی ان کو برداشت نہیں کرتے۔

مائیکرو فوبیا (MicroPhobia)

اکثر لوگوں کو آپ نے دیکھا ہوگا کہ وہ ہر وقت ہاتھ دھوتے رہتے ہیں یا بے جا صفائی ستھرائی کے خبط میں مبتلا ہوتے ہیں۔

Photo: File

ایسے لوگ ہر وقت اسی  وہم میں رہتے ہیں کہ ان کے ہاتھوں یا جسم پر گندگی یا جراثیم لگ گئے ہیں۔ یہ حالت ’’مائیکرو فوبیا‘‘کہلاتی ہے۔

زو فوبیا (ZooPhobia)

Photo: File

اس فوبیا کے شکار افراد کو حیوانات سے ڈرنے یا خوف آتا ہے ۔ اس فوبیا کے شکار ا فراد کسی بھی حیوان یا جانور کی موجودگی میں بے اطمینانی اور بے چینی محسوس کرتا ہے۔

پاتھو فوبیا (Patho Phobia)

اس فوبیا میں مبتلا افراد کو ہر وقت بیماریوں کا خوف ریتا ہے وہ خود کو بہمار محسوس کرتے ہیں۔

نہیں انگریزی مضمون ’’اے مین ہو واز اے ہوسپٹل‘‘ (AMan Who Was A Hospital)  اس کی بہترین مثال انٹرمیڈیٹ کی انگریزی کی کتاب کا ایک مضمون ہے جس میں بتایا گیا تھا کہ کیسے ایک آدمی مختلف بیماریوں کی علامات کتاب میں پڑھ پڑھ کر یہ محسوس کرنے لگتا ہے کہ وہ ساری بیماریاں اس کو لاحق ہوچکی تھیں۔

Photo: File

سوشل فوبیا (SocialPhobia)

اس فوبیا کے شکار افراد لوگوں سے ملنے سے خوفزدہ رہتے ہیں۔ یہ کیفیت فطری شرمیلے پن سے کہیں زیادہ شدید ہوتی ہے۔

Photo: File

ایسے افراد لوگوں کے سامنے جانے سے پریشانی محسوس کرتے ہیں۔ انہیں اس بات کی فکر رہتی ہے کہ آیا وہ موقعے کی مناسبت سے بات کر سکیں گے یا نہیں ۔

(Visited 190 times, 1 visits today)

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں