کراچی میں اندھے قتل کے ملزمان گرفتار،اعتراف جرم بھی کر لیا

کراچی
Loading...

کراچی کے علاقے شرافی گوٹھ سے برآمد ہونے والی لاش کا معمہ حل ہوگیا۔ پولیس نے دو ملزمان کو گرفتار کرلیا۔

ترجمان سندھ رینجرز کے مطابق شرافی گوٹھ سے چند روز قبل ڈبے سے لاش کے ٹکڑے برآمد کیے گئے تھے، جس کی تحقیقات جاری تھی۔ لاش کے ٹکڑے چوبیس سالہ ضعیم نامی نوجوان کے تھے، جو کورنگی نمبر2 کا رہائشی اور چوبیس اگست سے لاپتا تھا۔ ملزمان لاش کے ٹکڑے کر کے ڈبے میں پھینک کر فرار ہوگئے تھے۔

رینجرز کے مطابق تیس اگست کی رات ٹیکنیکل مانیٹرنگ اور شواہد کی روشنی میں کورنگی کے علاقے میں دو ملزمان زاہد اور شاہد کو گرفتار کیا گیا۔جن نے اقرار جرم کر لیا ہے،

Loading...

ابتدائی تفتیش کے دوران ملزمان نے اعتراف کرتے ہوئے بتایا کہ وہ دونوں آپس میں بھائی ہیں اور اُن کی مقتول ضعیم کے ساتھ کاروبار کی شراکت داری تھی اور ضعیم نے کاروبار کیلئے ان کو 36 لاکھ روپے دیئے تھے۔ معاہدے کے تحت جو منافع ضعیم کو دینا تھا وہ نہیں دے رہے تھے اور ضعیم کے بار بار مطالبے پر ملزمان نے ضعیم کو اپنے گھر بلایا اور گلے میں رسی ڈال کر قتل کر دیا۔

بعد ازاں لاش کو ٹھکانے لگانے کیلئے ملزمان نے مقتول ضعیم کی لاش کو 10 حصوں میں کاٹا اور ڈبے میں ڈال کر شرافی گوٹھ کے علاقے میں پھینک کر فرار ہوگئے۔ ملزمان کی نشاندہی پر ضعیم کی لاش کے باقی اعضاء کو رنگی اور لانڈھی کے مختلف علاقوں سے اکٹھے کر لیا گیا۔ ملزمان کے قبضے سے قتل میں استعمال ہونے والا ٹوکہ اور چھری بھی برآمد کر لی گئی۔ دونوں ملزمان کو قانونی کارروائی کیلئے پولیس کے حوالے کر دیا گیا ہے۔

(Visited 51 times, 1 visits today)
Loading...
Advertisements

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں