بھارت کو کلبھوشن کا وکیل کرنے کے لیے 14 جنوری تک مہلت مل گئی

بھارتی ہائی کمیشن
Loading...

اسلام آباد: ہائی کورٹ نے بھارت کو کلبھوشن کا وکیل کرنے کے لیے 14 جنوری تک کا وقت دے دیا۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ جسٹس اطہر من اللہ اطہر من اللہ کی سربراہی میں عدالت عالیہ کے لارجر بینچ نے بھارتی جاسوس کلبھوشن یادیو کے لیے وکیل مقرر کرنے کی درخواست پر سماعت کی۔ وفاق کی جانب سے اٹارنی جنرل خالد جاوید خان جب کہ بھارتی ہائی کمیشن کی جانب سے بیرسٹر شاہ نواز نون عدالت کے سامنے پیش ہوئے۔

اٹارنی جنرل نے عدالت کے روبرو کہا کہ بھارت کے لیے کلبھوشن تک قونصلر رسائی کی ہماری پیشکش ابھی بھی موجود ہے، اگر بھارتی ہائی کمیشن کوئی بات کرنا چاہتا ہے تو اپنے وکیل کے ذریعے کر سکتا ہے۔

عدالت نے گزشتہ سماعت پر بھارتی ہائی کمشن کے وکیل بیرسٹر شاہ نواز نون کو بھارتی ہائی کمشن سے ہدایات لے کر عدالت کو آگاہ کرنے کا حکم دیا تھا۔

Loading...

اٹارنی جنرل خالد جاوید خان نے عدالت کو بتایا تھا کہ بھارت جان بوجھ کر عدالتی کارروائی کا حصہ نہیں بن رہا، گزشتہ سماعت پر اٹارنی جنرل نے بھارتی ہائی کمیشن کے ذریعے کلبھوشن تک تیسری مرتبہ قونصلر رسائی کی پیشکش بھی کی تھی۔

بھارتی فضائیہ کا مگ 29 لڑاکا طیارہ سمندر میں گرکر تباہ

چیف جسٹس نے کہا تھا کہ کمانڈر یادیو بھارتی شہری ہے، معاملہ عالمی عدالت انصاف کے فیصلے پر عمل درآمد کرانا ہے، ہمیں بس بھارت کی معاونت چاہیے۔

چیف جسٹس نے یہ بھی کہا تھا کہ اگر بھارت کو کوئی تحفظات ہیں تو اس عدالت سے رجوع کر سکتا ہے، دوسری جانب بھارتی قیدی کی رہائی کی درخواست پر سماعت بھی کل اسلام آباد ہائی کورٹ میں ہوگی۔

(Visited 19 times, 1 visits today)
Loading...
Advertisements

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں