لاہور میں کرونا سے7 لاکھ سے زائد افراد متاثر ہونے کا خدشہ

لاہور: لاہور میں امریکا کے بعد سب سے زیادہ کرونا کے مریض 6 لاکھ 70 ہزار کیسز موجود ہونے کا خدشہ ہے، سمارٹ سیمپلنگ میں مثبت ٹیسٹوں کی شرح 6 فیصد سے زائد ریکارڈ کی گئی،

وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کو بھیجی گئی محکمہ صحت کی سمری میں چشم کشا انکشاف سامنے آئے ہیں جبکہ صوبائی دارالحکومت میں مکمل لاک ڈاؤن کی سفارش کی گئی ہے۔ لاہور میں سمارٹ سیمپلنگ محکمہ صحت کی سمری وزیر اعلی پنجاب کو ارسال کر دی گئی، جس میں لاہور میں سمارٹ سیمپلنگ کے نتائج اور سفارشات پیش کی گئیں۔ سیکرٹری سپشلائزڈ اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کی جانب سے سمری اور سفارشات بھجوائی گئیں۔

لاہور میں سمارٹ سیمپلنگ کے دوران کئے جانے والے ٹیسٹوں میں 6 فیصد کا رزلٹ پازیٹو رہا، لاہور کے 6 ٹاونز میں پازیٹو ٹیسٹ کی شرح 14 اعشاریہ 7 فیصد ریکارڈ کی گئی۔ سمارٹ سیمپلنگ مختلف ہاٹ سپاٹس، ورک سٹیشنز اور رہائشی علاقوں سے کی گئی۔

خیال رہے پاکستان میں کورونا کے متاثرین تیزی سے بڑھنے لگے، ملک بھر میں کورونا کے تصدیق شدہ کیسز کی تعداد 72 ہزار 460 تک پہنچ گئی جبکہ ایک دن میں 60 افراد جاں بحق ہوگئے جس کے بعد اموات کی تعداد ایک ہزار 543 ہوگئی۔

چند مخصوص شعبے بند رہیں گے بقیہ کھول دیے جائیں گے، وزیراعظم

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کے تازہ ترین اعداد و شمار  کے مطابق گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 2964 نئے کیسز رپورٹ ہوئے، پنجاب میں 26 ہزار 240، سندھ میں 28 ہزار 245، خیبر پختونخوا میں 10 ہزار 27، بلوچستان میں 4 ہزار 393، گلگت بلتستان میں 711، اسلام آباد میں 2 ہزار 589 جبکہ آزاد کشمیر میں 255 کیسز رپورٹ ہوئے۔

ملک بھر میں اب تک 5 لاکھ 61 ہزار 136 افراد کے ٹیسٹ کئے گئے، گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 14 ہزار 398 نئے ٹیسٹ کئے گئے، اب تک 26 ہزار 83 مریض صحتیاب ہوچکے ہیں جبکہ کئی مریضوں کی حالت تشویشناک ہے۔

(Visited 9 times, 1 visits today)
loading...

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں